Pakistn Film Magazine in Urdu/Punjabi


A Tribute To The Legendary Playback Singer Masood Rana

Masood Rana - مسعودرانا Masood Rana sang 1042 songs in 648 films

مسعودرانا اور عزیز میرٹھی

فلم بینوں کی اکثریت یہ تو جانتی ہے کہ پنجابی فلموں کے سب سے کامیاب اداکار سلطان راہی کے لیے بریک تھرو بننے والی فلم بشیرا (1972) تھی اور اردو فلموں کے کامیاب ترین اداکار ندیم کو بام عروج پر پہنچانے والی فلم دل لگی (1974) تھی لیکن بہت کم لوگ جانتے ہیں کہ ان سپرہٹ فلموں کے کردار تخلیق کرنے والے مصنف عزیز میرٹھی تھے۔۔!

عزیز میرٹھی نے پانچ درجن کے قریب فلموں کی کہانیاں ، مکالمے اور منظرنامے لکھے تھے۔ تین درجن فلموں کے مکمل مصنف جبکہ متعدد فلموں کے گیت لکھنے کے علاوہ بطور ہدایتکار آٹھ فلمیں بھی ان کے کریڈٹ پر ہیں۔

عزیز میرٹھی نے فلمی کیرئر کا آغاز فلم دو کنارے (1949) میں مکالمہ نگار کی حیثیت سے کیا تھا۔ اپنی دوسری فلم کندن (1950) میں مکمل مصنف یعنی کہانی نویس ، مکالمہ نگار اور منظرنامہ نگار ہونے کے علاوہ ایک گیت کے شاعر بھی تھے۔ وہ گیت بھی کیا کمال کا لکھا گیا تھا "یہ کیا دل لگی ہے ، نہ آنا ، نہ جانا ، کبھی یہ بہانہ ، کبھی وہ بہانہ۔۔" اس فلم کے ہدایتکار ایم ایس ڈار تھے جو معروف ہدایتکار اسلم ڈار کے والد گرامی تھے اور جن کے ساتھ عزیز میرٹھی کا بڑا زبردست ساتھ رہا تھا۔

عزیز میرٹھی کو پاکستان کی پہلی سپرہٹ گولڈن جوبلی فلم سسی (1954) کے جملہ گیت لکھنے کا اعزاز بھی حاصل ہے۔ اس ریکارڈ ساز فلم کا مقبول ترین گیت "نہ یہ چاند ہوگا ، نہ تارے رہیں گے مگر ہم ہمیشہ تمہارے رہیں گے۔۔" تھا۔ اس خوبصورت گیت کو بابا چشتی نے کوثرپروین اور پپوپکھراج کی آوازوں میں ریکارڈ کیا تھا۔ اسی سال ریلیز ہونے والی بھارتی فلم شرط (1954) میں ایک گیت اسی مکھڑے اور طرز کے ساتھ شامل تھا جو ہیمنت کمار کی دھن اور گائیکی میں ساتھی گلوکار گیتادت کے ساتھ تھا ، شاعر کے طور پر شمس الہدا بہاری کا نام ملتا ہے۔ اب نجانے کس نے کس کی نقل کی تھی البتہ یہ ایک حقیقت ہے کہ اس کے بعد عزیز میرٹھی کی بطور نغمہ نگار صرف تین فلموں میں تین گیت ہی ملتے ہیں۔

ہدایتکار کے طور پر عزیز میرٹھی نے کل آٹھ فلمیں بنائی تھیں جن کے مصنف بھی خود تھے۔ ان کی پہلی فلم حسن و عشق (1962) تھی جس میں نیلو اور رتن کمار روایتی جوڑی تھی۔ یہ ایک جادوئی فلم تھی۔ ان کی اگلی فلم ہزار داستان (1965) بھی ایسی ہی ایک فلم تھی جس میں محمدعلی اور رانی مرکزی کرداروں میں تھے۔ اس فلم میں رشیدعطرے کی دھن میں فیاض ہاشمی کا لکھا ہوا اور مہدی حسن کا گایا ہوا یہ گیت بڑا مقبول ہوا تھا "آنکھوں سے ملی آنکھیں ، دل دل سے جو ٹکرایا ، واللہ ، مزہ آیا۔۔" ان کی اگلی فلم عالیہ (1967) میں شمیم آرا اور کمال کی جوڑی تھی اور مہدی حسن کا یہ گیت بھی پسند کیا گیا تھا "نشان کوئی نہ چھوڑا کہ دل کو سمجھائیں۔۔" فیاض ہاشمی کے اس گیت کی دھن ماسٹرعنایت حسین نے بنائی تھی۔

عزیز میرٹھی کی بطور ہدایتکار فلم ستمگر (1967) میں پہلی بار مسعودرانا کا کوئی گیت ملتا ہے جو مالا کے ساتھ گایا ہوا ایک دلکش دوگانا تھا "پھر محبت تیرے در پر ہمیں لے آئی ہے۔۔" تنویرنقوی کی شاعری اور ماسٹرتصدق حسین کی موسیقی تھی۔ اسی فلم میں ایک تھیم سانگ بھی مسعودرانا کی آواز میں تھا "ماں کے دل کو توڑ کر ، ممتا کی جنت چھوڑ کر۔۔" رانی ، درپن ، یوسف خان اور صبیحہ اہم کردار تھے۔ فلم لالہ رخ (1968) بھی ایک الف لیلوی داستان تھی جس میں نیلو اور محمدعلی اہم کردار تھے۔ سلیم اقبال کی موسیقی میں مسعودرانا کا یہ تھیم سانگ تھا "ٹل ہی جائیں گے خطر ، کٹ ہی جائے گا سفر۔۔" جبکہ آئرن پروین کے ساتھ یہ مزاحیہ گیت بھی تھا "دنیا تو جھکی ہے میرے یار کے آگے۔۔"

عزیز میرٹھی پر جادوئی فلمیں بنانے کا لیبل لگ گیا تھا لیکن پرستان (1968) اس سلسلے کی آخری فلم ثابت ہوئی تھی جس میں نیلو کے ساتھ محمدعلی تھے۔ اس فلم میں رشیدعطرے کی دھن میں تنویرنقوی کا لکھا ہوا یہ گیت سپرہٹ ہوا تھا "محبت کے دم سے یہ دنیا حسین ہے ، محبت نہیں ہے تو کچھ بھی نہیں ہے۔۔" نسیم بیگم کے سپرہٹ گیتوں میں سے یہ ایک ناقابل فراموش گیت تھا۔ ان کی اگلی دونوں فلمیں مختلف انداز کی تھیں جن میں فلم یادیں (1971) ایک رومانٹک اور نغماتی فلم تھی۔ رجب علی اور میڈم نورجہاں کا یہ دوگانا بڑا مقبول ہوا تھا "مجھ سا تجھ کو چاہنے والا ، اس دنیا میں کوئی اور ہو ، اللہ نہ کرے۔۔" زیبا اور محمدعلی پر فلمائے گئے اس گیت کے شاعر تسلیم فاضلی اور موسیقارایم اشرف تھے۔ بطور ہدایتکار ان کی آخری فلم پیاسی (1988) ایک گمنام فلم تھی۔

عزیز میرٹھی کی اصل پہچان مصنف کے طور پر تھی۔ ان کی پانچ درجن فلموں میں سے تین درجن فلموں کے وہ مکمل مصنف تھے جن میں ناگن (1959) ، سلطنت (1960) ، خیبرپاس (1964) ، ہزارداستان (1965) ، بشیرا (1972) زرق خان ، بنارسی ٹھگ (1973) ، دل لگی ، بابل صدقے تیرے (1974) اور زبیدہ (1976) اہم ترین فلمیں تھیں۔ آخری فلم شیردل (2012) ریکارڈ پر ہے۔

مسعودرانا کے ساتھ بطور مصنف ، عزیز میرٹھی کی 13 فلموں میں سے پہلی یادگار ترین فلم بشیرا (1972) تھی۔ اس فلم کی ہائی لائٹ کمال احمد کی دھن میں مشیر کاظمی کی لکھی ہوئی یہ قوالی تھی "کاہنوں کڈھنا ایں نک نال لکیراں ، تو دل دی لکیری کڈھ لے۔۔" مجھے کبھی نہیں بھولتا کہ ایک فلم بین اپنے ساتھی کو یہ بتا رہا تھا کہ سلطان راہی ایک برا آدمی ہوتا تھا (یعنی ولن تھا) لیکن یہ قوالی سن کر اس نے گناہوں سے توبہ کر لی تھی اور نیک ہوگیا تھا (یعنی ہیرو بن گیا تھا)۔ فلمی کہانی اور سلطان راہی کی فلمی داستاں بھی کچھ ایسی ہی تھی۔ فلم زرق خان (1973) میں بھی سلطان راہی ہیرو تھے۔ اس فلم میں رنگیلا پر فلمایا ہوا مسعودرانا کا ایک کلاسیکل گیت فلم کی ہائی لائٹ تھا "یاد میں تیرے صدیاں بیتیں ، ایک جھلک دکھلا جا۔۔" یہ دونوں فلمیں ان دس فلموں میں شامل تھیں جو عزیز میرٹھی اور ہدایتکار اسلم ڈار کی شراکت میں بنی تھیں۔

عزیز میرٹھی کی بطور مصنف ایک اور سپرہٹ فلم بنارسی ٹھگ (1973) بھی تھی۔ یہ کئی لحاظ سے ایک یادگار فلم تھی۔ پنجابی فلموں کی کلاسیک جوڑی ، فردوس اور اعجاز کی یہ آخری سپرہٹ فلم تھی۔ اس فلم کے میڈم نورجہاں کے گائے ہوئے گیت "اکھ لڑی بدو بدی۔۔" نے ممتاز کو ایک ڈانسر سے صف اول کی ہیروئن بنا دیا تھا۔ ایک چوٹی کے کامیڈین منورظریف کو ایک چوٹی کا کامیڈی ہیرو بنانے والی فلم بھی یہی تھی جن پر مسعودرانا کا یہ سپرہٹ گیت فلمایا گیا تھا "نشیاں نیں ساڑھیا ، حلیہ وگاڑیا ، اپنی تباہی آپے کرنا ایں پیاریا۔۔" اس فلم کے ہدایتکار اقبال کاشمیری تھے جن کے ساتھ بھی عزیز میرٹھی کی دس فلمیں ملتی ہیں۔

عزیز میرٹھی کی ایک اور یادگار فلم دل لگی (1974) تھی جس نے شبنم اور ندیم کو اردو فلموں کی ضرورت بنا دیا تھا۔ یاد رہے کہ اس سے قبل اس جوڑی کی جتنی بھی فلمیں کامیاب ہوتی تھیں ، وہ کراچی سرکٹ کی ہوتی تھیں۔ کراچی میں کامیاب ہونے والی فلم کا مطلب یہ نہیں ہوتا تھا کہ وہ باقی ملک میں بھی کامیاب فلمیں تھیں۔ کراچی میں ملک کی دس فیصد آبادی ہے اور وہاں کل سینماؤں کا بھی صرف دس فیصد ہوتا تھا۔ ہمارے میڈیا پر چونکہ اردو بولنے والوں کی اجارہ داری رہی ہے ، اس لیے ہمیں پڑھنے ، سننے اور دیکھنے کو وہی کچھ ملتا ہے ، جو انھیں پسند ہوتا ہے یا جس کا انھیں علم ہوتا ہے۔ عام آدمی کے پاس چھان پھٹک کا وقت نہیں ہوتا اور وہ اسی کو سچ سمجھتا ہے جو وہ دیکھتا ، سنتا یا پڑھتا ہے۔ یہ ایک حقیقت ہے کہ نوے فیصد پاکستانیوں کی میڈیا پر نمائندگی نہیں ہوتی اور جس پاکستان کا تصور میڈیا پر پیش کیا جاتا ہے ، وہ دیوار پر لٹکے ایک نقشے کے علاوہ چند کتابوں اور نظریات تک محدود ہوتا ہے۔

شبنم اور ندیم کی جوڑی کی پہلی بڑی فلم دل لگی (1974) تھی جس کے دونوں سپرہٹ گیت گانے کا اعزاز بھی مسعودرانا کو حاصل تھا۔ پہلا گیت تھا "آگ لگا کر چھپنے والے ، سن میرا افسانہ ، میں گیتوں میں تجھے پکاروں ، لوگ کہیں دیوانہ۔۔" ماسٹررفیق علی کی موسیقی میں مشیرکاظمی کا دوسرا گیت بھی ندیم صاحب پر فلمایا گیا تھا "مرجھائے ہوئے پھولوں کی قسم ، اس دیس میں پھر نہ آؤں گا ، مالک نے اگر بھیجا بھی مجھے ، میں راہوں میں کھو جاؤں گا۔۔" اس آخری گیت سے میری بڑی گہری یادیں وابستہ ہیں۔ مئی 1982ء میں دوبارہ ڈنمارک آنے کا موقع ملا تھا تو پاکستان سے روانگی کے وقت یہ گیت میرے لبوں پر مچل رہا تھا۔ اس کا پس منظر البتہ بڑا تلخ تھا۔۔!

1970ء میں صرف آٹھ سال کی عمر سے روزانہ کی اخبار بینی کے علاوہ ریڈیو ، ٹی وی اور فلم سے دلچسپی نے مجھے بزرگوں میں بیٹھ کر سیاسی بحث و مباحثہ میں حصہ لینے کا موقع دیا۔ پاکستان کے پہلے انتخابات ، سیاسی بحران ، سانحہ مشرقی پاکستان ، جنگ دسمبر 1971ء کے علاوہ پاکستان کی تاریخ کے عظیم ترین لیڈر اور واحد عوامی لیڈر جناب ذوالفقارعلی بھٹو کا دورحکومت اور کئی ایک انقلابی اقدامات وغیرہ آج تک ذہن سے چپکے ہوئے ہیں۔ بھٹو صاحب کی کرشماتی شخصیت نے ایسا پختہ سیاسی شعور دیا تھا کہ میں ایک جنونی پاکستانی بن گیا تھا۔ یہی وجہ تھی کہ جب دسمبر 1973ء میں جبراً ڈنمارک بھیجا گیا تھا تو تمام تر مادی وسائل کے باوجود یہاں کے ماحول کو قبول نہیں کیا تھا اور پاکستان واپس جانے کی ضد کرتا تھا جہاں میرا بچپن انتہائی غیر معمولی طور پر گزرا تھا۔

دسمبر 1976ء میں جب تین سالہ قیام کے بعد دوبارہ پاکستان گیا تو میری پاکستانیت اپنے جوبن پرتھی۔ جتنی مادی سہولیات ڈنمارک میں میسر تھیں ، پاکستان جیسے غریب ترین ملک میں ان کا تصور بھی نہیں کرسکتا تھا لیکن وطن کی محبت میں سب کچھ قربان کر کے پاکستان چلا گیا تھا۔ میرا ارادہ ایک سرگرم پاکستانی کے طور زندگی گزارنے کا تھا جو تعلیم مکمل کرکے قلمی جہاد سے جہالت کا مقابلہ کرنا چاہتا تھا۔ لیکن پاکستان میں اپنے ساڑھے پانچ سالہ قیام نے اتنے تلخ تجربات سے دوچار کیا کہ پچھتانا پڑا کہ یہاں آنے کی حماقت کیوں کی۔ پھر وہ وقت بھی آیا کہ دن رات دعائیں مانگنے لگا کہ کسی طرح سے دوبارہ واپس جا سکوں۔ مسئلہ یہ پیدا ہوا کہ دادا جان کا انتقال ہوگیا تھا ، والدصاحب واپس چلے گئے تھے لیکن مجھے اپنی والدہ صاحبہ اور چھوٹے بہن بھائیوں کے لیے رکنا پڑا جو اکیلے رہ گئے تھے۔ ارادہ تھا کہ پوری فیملی ایک ساتھ ڈنمارک جائیں گے۔ ویزے اپلائی کیے گئے جو رد ہوگئے تھے۔ وجہ یہ بنی کہ سرکاری دستاویزات میں دو چھوٹی بہنوں کی عمروں میں فرق صرف چھ ماہ کا لکھا ہوا تھا جو ظاہر ہے کہ انتہائی مشکوک تھا۔ اس غیرمعمولی غلطی کی وجہ یہ تھی کہ جب 1974ء میں پاکستان میں پہلی بار شناختی کارڈ سسٹم کا اجراء ہوا تھا تو ہر شہری کو اپنے نام کے ساتھ تاریخ پیدائش بھی لکھنا پڑتی تھی۔ اکثریت ان پڑھ تھی جنہیں اپنی پیدائش کی تاریخ تک معلوم نہ تھی۔ اوپر سے سہل پسندی اور ہڈحرامی ہمارے ہاں معمول ہے۔ دادا جان مرحوم نے اپنے ایک دوست کی معرفت شناختی کارڈز بنوائے جن پر متعلقہ دوست نے اپنی صوابدید پر اندازاً نام اور تاریخ پیدائشیں لکھوا دی تھیں۔ بعد میں پاسپورٹ بھی انھی دستاویزات کے مطابق بنے جس کی وجہ سے ویزہ اپلائی کرنے پر رد ہوگیا تھا۔ اس سنگین غلطی کا خمیازہ مجھے بھگتنا پڑا کیونکہ بغیر ویزے کے واپس ڈنمارک جانا ممکن نہیں تھا۔

کاتب تقدیر کی یہ حکمت تھی کہ جب میں تاریخ و سیاست کا طالبعلم تھا تو میرے لیے ان عملی تجربات سے گزرنا بھی ضروری تھا جو مستقبل قریب میں ہونے والے تھے۔ دسمبر 1976ء میں میرے پاکستان جانے کے بعد سیاسی حالات تیزی سے تبدیل ہونا شروع ہوئے۔ جناب ذوالفقارعلی بھٹو ، ایک انتہائی مقبول اور مضبوط وزیراعظم تھے لیکن ان کا زوال شروع ہوگیا تھا۔ 1977ء کے متنازعہ انتخابات ، مبینہ انتخابی دھاندلیاں ، بھٹو حکومت کے خلاف مجرمانہ پرتشدد تحریک ، مارشل لاء کا نفاذ ، جنرل ضیاع مردود کی آئین سے بغاوت اور اقتدار پر جبری قبضہ ، بھٹو کے خلاف سرکاری خرچ پر کردار کشی ، بے بنیاد مقدمہ قتل میں سفاکانہ پھانسی ، جنرل ضیاع مردود کی آمرانہ حکومت کی بدمعاشیاں ، مجبور ہ مقہور میڈیا کا کردار اور عمومی عوامی جذبات وغیرہ ، میں ان سب تاریخی واقعات کا عینی شاہد تھا جنہیں بڑی تفصیل سے اپنی ڈائریوں میں رقم کیا کرتا تھا۔

ڈنمارک جیسے ایک مثالی اور جمہوری ملک میں رہ چکا تھا جہاں پچھلے ڈیڑھ سو سال سے جمہوری نظام بڑی کامیابی سے چل رہا ہے۔ یہاں کوئی فرد یا ادارہ قانون سے بالاتر نہیں ہے اور ہر کام قواعد و ضوابط کے مطابق ہوتا ہے۔ ایسے میں کسی آمر یا آمرانہ سوچ کو قبول کرنا بڑا مشکل تھا جہاں کوئی جاہ طلب شخص محض طاقت کے بل بوتے پر وقت کا فرعون بن جائے اور خلق خدا کو بھیڑ بکریاں سمجھے۔ جولائی 1977ء میں جدید تاریخ کا سب سے بڑا منافق ، ڈکٹیٹر جنرل ضیاع مردود ، پاکستان پر مسلط ہوگیا تھا۔ اس مردود کا نام لیتے ہوئے زبان ناپاک ہو جاتی ہے کیونکہ کسی غلیظ ترین گالی کے بغیر اس لعنتی کردار کا نام لینا ممکن ہی نہیں۔ اس دور میں عوام الناس میں یہ احساس بڑا شدید ہوگیا تھا کہ طاقت کا سرچشمہ عوام نہیں بلکہ غاصبوں ، جابروں اور طاقتور مفادپرستوں کا ٹولہ ہے جو اس ملک پر کسی وباء کر طرح مسلط ہوجاتا ہے۔ میری طرح جو لوگ سوچنے ، سمجھنے اور پرکھنے کے عادی ہوتے ہیں ، ان کے لیے ایسی گھٹن میں زندہ رہنا محال ہوجاتا ہے۔ ضمیر کی موت ، روح کی موت ہے اور یہی فرق ، انسان کو حیوان سے ممتاز کرتا ہے۔ ان دنوں ٹی وی پر ایک گیت بڑا مشہور ہوا تھا "تیرا پاکستان ہے ، یہ میرا پاکستان ہے ، اس پہ دل قربان ، اس پہ جان بھی قربان ہے۔۔" امجدحسین نامی گلوکار کے گائے ہوئے اس گیت کی پیروڈی بڑی مشہور ہوئی تھی جو اسوقت کے حالات کی مکمل تصویر تھی "تیرا پاکستان ہے نہ میرا پاکستان ہے ، یہ اس کا پاکستان ہے ، جو صدر پاکستان ہے۔۔"

میرا زندگی بھر کبھی کسی سیاسی پارٹی سے کوئی تعلق نہیں رہا ، نہ کبھی سیاسی سرگرمیوں میں ملوث رہا ہوں ، نہ کبھی سیاسی عزائم رہے ہیں لیکن بھٹو صاحب کی شخصیت اور ان کا سیاسی کردار ہمیشہ غیر متنازعہ رہا۔ بچپن سے ان کے بڑے بڑے ناقدین کو پڑھنے ، سننے اور دیکھنے کے باوجود کبھی متاثر نہیں ہوا۔ تاریخ کو اس کے اصل سیاق و سباق میں دیکھتا ہوں اور دکھانا بھی چاہتا ہوں جو پاکستان جیسے ملک میں ممکن نہیں تھا جہاں لکیر کے فقیر خلاف مزاج تحریر و تقریر برداشت نہیں کر سکتے۔ جہالت ، تنگ نظری ، غلامانہ اور فرسودہ سوچ کا دور دورہ ہے اور غنڈہ گردی اور بدمعاشی سے مخالف آوازیں دبا دی جاتی ہیں۔

ساڑھے پانچ سال کی ذہنی اذیت کے بعد مایوسی کے بادل بالآخر چھٹ گئے اور دوبارہ ڈنمارک آنے کا موقع مل گیا تھا۔ ہوا یوں کہ ڈنمارک کے چند اعلیٰ تعلیم یافتہ افراد پر مشتمل ایک گروپ ہمارے تعلیمی نظام اور کلچر کے بارے میں ایک جائزے یا سروے کے لیے پاکستان گیا۔ گائیڈ اور ترجمان کے طور پر ایک پاکستانی ساتھ تھے جو اتفاق سے والدصاحب مرحوم کے قریبی دوست تھے۔ وہ اس گروپ کو اچانک ہمارے گھر لے آئے جہاں انھوں نے رات بسر کی۔ حسب توفیق ان کی خاطر و مدارت کی گئی۔ دوسرے دن وہ ہمارے خاندان کے کئی افراد کے گھروں میں گئے اور ہماری مہمان نوازی اور رہن سہن کا قریبی مشاہدہ کیا۔ میں نے کئی سال بعد ان سے ڈینش زبان میں بات کی تو وہ بڑے متاثر ہوئے۔ یہ جان کر کہ ہمارے ویزے رد ہوگئے تھے تو انھوں نے ہمارا کیس لڑنے کا فیصلہ کیا۔ ایک سال کے اندر اندر ہمارے ویزے لگ گئے تھے اور ایک طویل اور صبر آزما امتحان ختم ہوگیا تھا۔ بلاشبہ یہ ایک غیبی مدد تھی۔۔!

پاکستان کے حالات سے اس قدر دل برداشتہ ہوچکا تھا کہ فیصلہ کر لیا تھا کہ دوبارہ کبھی اس مقبوضہ سرزمین پر قدم نہیں رکھوں گا۔ اس وقت "مرجھائے ہوئے پھولوں کی قسم ، اس دیس میں پھر نہ آؤں گا۔۔" جیسا شاہکار گیت میرے جذبات کی مکمل طور پر ترجمانی کررہا تھا۔ عرصہ چودہ سال بعد دوبارہ 1996ء میں پاکستان گیا ، تب بے نظیر بھٹو کی حکومت تھی لیکن اختیارات کا منبع پھر بھی آمر مردود کی باقیات تھیں۔ آخری بار 2002ء میں ڈکٹیٹر مشرف کے دور میں جانا پڑا اور اپنے مادر وطن جانے کی رہی سہی خواہش بھی ختم ہوگئی تھی۔ گو گزشتہ دو عشروں سے پاکستان نہیں گیا لیکن حقیقت یہ ہے کہ آج بھی اور ہر وقت اس خیالی پاکستان میں رہتا ہوں ، جو میرا اور ہر اس غیور پاکستانی کا ہے جو اس سرزمین پر پیدا ہوا اور خود کو پاکستانی سمجھتا ہے۔ یہی خواہش ہے کہ جس طرح ڈنمارک ایک مثالی جمہوری اور فلاحی ریاست ہے ، کاش میرا آبائی وطن پاکستان بھی بن جائے ، یہ مشکل تو ہے لیکن ناممکن نہیں۔ یہ ایک خواب ہے جو ابھی ایک مدت تک شرمندہ تعبیر ہوتا نظر نہیں آتا اور لگتا ہے کہ اپنے باپ کی طرح مجھے بھی ڈنمارک کی مٹی ہی میں دفن ہونا پڑے گا۔۔!

مسعودرانا کے عزیز میرٹھی کی 13 فلموں میں 21 گیت

(13 اردو گیت ... 8 پنجابی گیت )
1
فلم ... ستمگر ... اردو ... (1967) ... گلوکار: مسعود رانا ، مالا ... موسیقی: تصدق حسین ... شاعر: تنویر نقوی ... اداکار: درپن ، رانی
2
فلم ... ستمگر ... اردو ... (1967) ... گلوکار: مسعود رانا ... موسیقی: تصدق حسین ... شاعر: فیاض ہاشمی ... اداکار: (پس پردہ، صبیحہ ، درپن)
3
فلم ... لالہ رخ ... اردو ... (1968) ... گلوکار: مسعود رانا ... موسیقی: سلیم اقبال ... شاعر: تنویر نقوی ... اداکار: (پس پردہ)
4
فلم ... لالہ رخ ... اردو ... (1968) ... گلوکار: مسعود رانا ، آئرن پروین ... موسیقی: سلیم اقبال ... شاعر: ریاض الرحمان ساغر ... اداکار: ننھا
5
فلم ... میں اکیلا ... اردو ... (1972) ... گلوکار: مسعود رانا مع ساتھی ... موسیقی: بخشی وزیر ... شاعر: مشیر کاظمی ... اداکار: اسد بخاری
6
فلم ... میں اکیلا ... اردو ... (1972) ... گلوکار: مسعود رانا ... موسیقی: بخشی وزیر ... شاعر: مشیر کاظمی ... اداکار: (پس پردہ، اسد بخاری )
7
فلم ... میں اکیلا ... اردو ... (1972) ... گلوکار: سائیں اختر ، عنایت حسین بھٹی ، مسعود رانا مع ساتھی ... موسیقی: بخشی وزیر ... شاعر: ؟ ... اداکار: بخشی وزیر مع ساتھی
8
فلم ... میں اکیلا ... اردو ... (1972) ... گلوکار: مسعود رانا ، نسیم بیگم ... موسیقی: بخشی وزیر ... شاعر: ؟ ... اداکار: شاہد ، آسیہ
9
فلم ... بشیرا ... پنجابی ... (1972) ... گلوکار: مسعود رانا مع ساتھی ... موسیقی: کمال احمد ... شاعر: مشیر کاظمی ... اداکار: امداد حسین مع ساتھی
10
فلم ... زرق خان ... اردو ... (1973) ... گلوکار: مسعود رانا ... موسیقی: کمال احمد ... شاعر: فیاض ہاشمی ... اداکار: رنگیلا
11
فلم ... خدا تے ماں ... پنجابی ... (1973) ... گلوکار: مسعود رانا ... موسیقی: وجاہت عطرے ... شاعر: خواجہ پرویز ... اداکار: (پس پردہ، ٹائٹل سانگ ، تھیم سانگ ، نیئر سلطانہ)
12
فلم ... خدا تے ماں ... پنجابی ... (1973) ... گلوکار: آئرن پروین ، مسعود رانا ... موسیقی: وجاہت عطرے ... شاعر: حزیں قادری ... اداکار: شایدہ ، منور ظریف
13
فلم ... بنارسی ٹھگ ... پنجابی ... (1973) ... گلوکار: مسعود رانا مع ساتھی ... موسیقی: بخشی وزیر ... شاعر: خواجہ پرویز ... اداکار: منور ظریف
14
فلم ... رنگیلا عاشق ... پنجابی ... (1973) ... گلوکار: مسعود رانا ... موسیقی: وجاہت عطرے ... شاعر: وارث لدھیانوی ... اداکار: رنگیلا
15
فلم ... رنگیلا عاشق ... پنجابی ... (1973) ... گلوکار: مسعود رانا ... موسیقی: وجاہت عطرے ... شاعر: ؟ ... اداکار: رنگیلا
16
فلم ... دل لگی ... اردو ... (1974) ... گلوکار: مسعود رانا ... موسیقی: ماسٹر رفیق علی ... شاعر: مشیر کاظمی ... اداکار: ندیم
17
فلم ... دل لگی ... اردو ... (1974) ... گلوکار: مسعود رانا ... موسیقی: ماسٹر رفیق علی ... شاعر: مشیر کاظمی ... اداکار: ندیم
18
فلم ... سہاگ میرا لہو تیرا ... پنجابی ... (1974) ... گلوکار: مسعود رانا ... موسیقی: ماسٹر عنایت حسین ... شاعر: حامد دارد ... اداکار: ؟
19
فلم ... چترا تے شیرا ... پنجابی ... (1976) ... گلوکار: مسعود رانا ... موسیقی: ماسٹر عنایت حسین ... شاعر: ؟ ... اداکار: منور ظریف
20
فلم ... تقدیر کہاں لے آئی ... اردو ... (1976) ... گلوکار: مالا ، مسعود رانا ... موسیقی: منظور ... شاعر: روبی ... اداکار: ؟
21
فلم ... الہ دین ... اردو ... (1981) ... گلوکار: مسعود رانا ... موسیقی: کمال احمد ... شاعر: خواجہ پرویز ... اداکار: فیصل

Masood Rana & Aziz Meeruti: Latest Online film

Dillagi

(Urdu - Color - Friday, 15 February 1974)


Masood Rana & Aziz Meeruti: Film posters
SitamgarLala RukhMain AkelaBasheeraZarq KhanBanarsi ThugDillagiSuhag Mera Lahu TeraTaqdeer Kahan Lay AyiAladin
Masood Rana & Aziz Meeruti:

5 joint Online films

(3 Urdu and 2 Punjabi films)

1.02-01-1968Lala Rukh
(Urdu)
2.22-06-1973Khuda Tay Maa
(Punjabi)
3.23-11-1973Rangeela Ashiq
(Punjabi)
4.15-02-1974Dillagi
(Urdu)
5.02-08-1981Aladin
(Urdu)
Masood Rana & Aziz Meeruti:

Total 13 joint film

(7 Urdu, 6 Punjabi films)

1.10-11-1967: Sitamgar
(Urdu)
2.02-01-1968: Lala Rukh
(Urdu)
3.23-06-1972: Main Akela
(Urdu)
4.21-07-1972: Basheera
(Punjabi)
5.16-01-1973: Zarq Khan
(Urdu)
6.22-06-1973: Khuda Tay Maa
(Punjabi)
7.28-10-1973: Banarsi Thug
(Punjabi)
8.23-11-1973: Rangeela Ashiq
(Punjabi)
9.15-02-1974: Dillagi
(Urdu)
10.06-12-1974: Suhag Mera Lahu Tera
(Punjabi)
11.16-07-1976: Chitra Tay Shera
(Punjabi)
12.17-12-1976: Taqdeer Kahan Lay Ayi
(Urdu)
13.02-08-1981: Aladin
(Urdu)


Masood Rana & Aziz Meeruti: 21 song in 13 film

(13 Urdu and 8 Punjabi songs)

1.
Urdu film
Sitamgar
from Friday, 10 November 1967
Singer(s): Masood Rana, Music: Tasadduq Hussain, Poet: , Actor(s): (Playback - Sabiha, Darpan)
2.
Urdu film
Sitamgar
from Friday, 10 November 1967
Singer(s): Masood Rana, Mala, Music: Tasadduq Hussain, Poet: , Actor(s): Darpan, Rani
3.
Urdu film
Lala Rukh
from Tuesday, 2 January 1968
Singer(s): Masood Rana, Irene Parveen, Music: Saleem Iqbal, Poet: , Actor(s): Nanha, Husn Ara
4.
Urdu film
Lala Rukh
from Tuesday, 2 January 1968
Singer(s): Masood Rana, Music: Saleem Iqbal, Poet: , Actor(s): (Playback)
5.
Urdu film
Main Akela
from Friday, 23 June 1972
Singer(s): Masood Rana, Naseem Begum, Music: Bakhshi Wazir, Poet: , Actor(s): Shahid, Asiya
6.
Urdu film
Main Akela
from Friday, 23 June 1972
Singer(s): Sain Akhtar, Inayat Hussain Bhatti, Masood Rana & Co., Music: Bakhshi Wazir, Poet: , Actor(s): Bakhshi Wazir & Co.
7.
Urdu film
Main Akela
from Friday, 23 June 1972
Singer(s): Masood Rana, Music: Bakhshi Wazir, Poet: , Actor(s): Asad Bukhari
8.
Urdu film
Main Akela
from Friday, 23 June 1972
Singer(s): Masood Rana, Music: Bakhshi Wazir, Poet: , Actor(s): (Playback - Asad Bukhari)
9.
Punjabi film
Basheera
from Friday, 21 July 1972
Singer(s): Masood Rana & Co., Music: Kemal Ahmad, Poet: , Actor(s): Imdad Hussain & Co.
10.
Urdu film
Zarq Khan
from Tuesday, 16 January 1973
Singer(s): Masood Rana, Music: Kemal Ahmad, Poet: , Actor(s): Rangeela
11.
Punjabi film
Khuda Tay Maa
from Friday, 22 June 1973
Singer(s): Irene Parveen, Masood Rana, Music: Wajahat Attray, Poet: , Actor(s): Shahida, Munawar Zarif
12.
Punjabi film
Khuda Tay Maa
from Friday, 22 June 1973
Singer(s): Masood Rana, Music: Wajahat Attray, Poet: , Actor(s): (Playback - Nayyar Sultana)
13.
Punjabi film
Banarsi Thug
from Sunday, 28 October 1973
Singer(s): Masood Rana, Music: Bakhshi Wazir, Poet: , Actor(s): Munawar Zarif
14.
Punjabi film
Rangeela Ashiq
from Friday, 23 November 1973
Singer(s): Masood Rana, Music: Wajahat Attray, Poet: , Actor(s): Rangeela
15.
Punjabi film
Rangeela Ashiq
from Friday, 23 November 1973
Singer(s): Masood Rana, Music: Wajahat Attray, Poet: , Actor(s): Rangeela
16.
Urdu film
Dillagi
from Friday, 15 February 1974
Singer(s): Masood Rana, Music: Master Rafiq Ali, Poet: , Actor(s): Nadeem
17.
Urdu film
Dillagi
from Friday, 15 February 1974
Singer(s): Masood Rana, Music: Master Rafiq Ali, Poet: , Actor(s): Nadeem
18.
Punjabi film
Suhag Mera Lahu Tera
from Friday, 6 December 1974
Singer(s): Masood Rana, Music: Master Inayat Hussain, Poet: , Actor(s): ?
19.
Punjabi film
Chitra Tay Shera
from Friday, 16 July 1976
Singer(s): Masood Rana, Music: Master Inayat Hussain, Poet: , Actor(s): Munawar Zarif
20.
Urdu film
Taqdeer Kahan Lay Ayi
from Friday, 17 December 1976
Singer(s): Mala, Masood Rana, Music: Manzoor, Poet: , Actor(s): ?
21.
Urdu film
Aladin
from Sunday, 2 August 1981
Singer(s): Masood Rana, Music: Kemal Ahmad, Poet: , Actor(s): Faisal


پاکستان فلم میگزین ۔۔۔ سنہری فلمی یادوں کا امین

پاکستان فلم میگزین ، پاکستانی فلموں ، فلمی گیتوں اور فلمی فنکاروں پر اولین ، منفرد اور ایک بے مثل معلوماتی اور تفریحی ویب سائٹ ہے جو 3 مئی 2000ء سے مسلسل اپ ڈیٹ ہورہی ہے۔ یہ ایک انفرادی کاوش ہے جو فارغ اوقات کا ایک بہترین مشغلہ بھی ہے۔ یہ تاریخ ساز ویب سائٹ کبھی نہ بن پاتی ، اگر پاکستانی فلموں میں میرے آئیڈیل گلوکار جناب مسعودرانا صاحب کے گیت نہ ہوتے۔ اس عظیم گلوکار کو ایک منفرد خراج تحسین پیش کرنے کے لئے اس کے گائے ہوئے ایک ہزار سے زائد گیتوں کا پہلا اردو ڈیٹابیس بنایا گیا ہے جس میں ریکارڈ محفوظ رکھنے کے علاوہ دیگر ساتھی فنکاروں پر تفصیلی مضامین بھی شائع کئے جارہے ہیں۔

تازہ ترین اپ ڈیٹس




Pakistan Film Magazine

The first and largest website on Pakistani films, music and artists with chronological film history since 1913, useful information's, facts & figures, milestones, filmo- & songographies, images, videos and Urdu/Punjabi articles on various film topics.



Naaz
Naaz
(1969)
Hirasat
Hirasat
(1980)
Tevar
Tevar
(2019)



Artists database

Useful information's with detailed film records, milestones, videos, images etc..


Click on any category from the menu below and read more information's..