Pakistn Film Magazine in Urdu/Punjabi


A Tribute To The Legendary Playback Singer Masood Rana

Masood Rana - مسعودرانا Masood Rana sang 1038 songs in 647 films

مسعودرانا اور جمیل اختر

جمیل اختر
متعدد انقلابی فلموں کے ہدایتکار تھے
Khamosh Raho (1964)

ہدایتکار جمیل اختر کی پہلی ہی فلم ایک بہت بڑی اور دھماکہ خیز فلم خاموش رہو (1963) تھی جو دنیا کے قدیم ترین لیکن ایک انتہائی حقیر ، غلیظ اور بدنام زمانہ پیشہ یا دھندہ یعنی جسم فروشی جیسے حساس اور ممنوع موضوع پر بننے والی ایک شاہکار فلم تھی جسے دیکھ کر اندازہ ہی نہیں ہوتا تھا کہ یہ ان کی پہلی کاوش ہے۔ اصل میں جمیل اختر کو اس سے قبل اپنے استاد محترم خلیل قیصر جیسے لی جنڈ کے ساتھ پانچ فلموں ناگن (1959) ، کلرک (1960) ، عجب خان (1961) ، شہید اور دوشیزہ (1962) میں معاونت کرنے کا اعزاز حاصل تھا۔ وہ ایک جوہر شناس جوہری کے تراشے ہوئے ایک ہیرے بن چکے تھے یا یوں کہئے کہ سونار کی بھٹی میں جل کر کندن ہو چکے تھے۔

ایک معاشرتی ناسور پر بننے والی فلم خاموش رہو (1963) کے مصنف ریاض شاہد جیسے عظیم فنکار تھے جن کی کہانی اور مکالموں نے فلم کو چار چاند لگا دیے تھے۔ اس فلم میں فاحشہ ، آبرو باختہ اور مجبور و بے بس عورتوں کی دلالی کرنے والی بدنام زمانہ نائیکہ 'خانم' کا کردار اداکارہ مینا شوری کے فلمی کیرئر کا سب سے بڑا کردار تھا۔ تقسیم سے قبل کی یہ نامور اداکارہ اپنے ایک شوخ فلمی کردار 'لارالپا گرل' کی وجہ سے مشہور تھی۔ 1956ء میں اپنے ہندو خاوند کے ساتھ پاکستان آئی اور پھر یہیں کی ہو کر رہ گئی تھی۔ اسے فلم مس 56ء (1956) میں ہیروئن کاسٹ کیا گیا تھا۔ متعدد فلموں میں ہیروئن آئی لیکن کامیابی کیریکٹرایکٹر کرداروں سے ملی تھی۔ وہ اپنے معاشقوں اور شادیوں کی وجہ سے بھی جانی جاتی تھی۔ اس کے آخری شوہر اداکار اسد بخاری تھے جو اس تعلق کو شادی نہیں ، متعہ کہتے تھے جو ایک متنازعہ اسلامی قانون ہے اور جسم فروشی کا ایک حلال طریقہ بھی ہے۔

فلم خاموش رہو (1963) کی روایتی فلمی جوڑی تو دیبا اور یوسف خان کی تھی لیکن اس فلم سے عظیم فلمی ہیرو محمدعلی کو بریک تھرو ملا تھا۔ خلیل احمد کی دھن میں حبیب جالب کا لکھا اور ناہید نیازی کا گایا ہوا یہ تھیم سانگ "جاگنے والو جاگو مگر ، خاموش رہو۔۔!" ایک پورا مضمون بیان کررہا ہے۔ جالب صاحب ہی کی لکھی ہوئی ایک نظم "میں نہیں مانتا۔۔" بھی احمدرشدی کی آواز میں فلم میں شامل کی گئی تھی جو در اصل وقت کے فوجی آمر جنرل ایوب خان کے جون 1962ء کو نافذ کیے گئے شخصی آئین کے خلاف بطور احتجاج لکھی گئی تھی۔ اس فلم کا سب سے سپر ہٹ گیت مالا کا گایا ہوا تھا "میں نے تو پریت نبھائی ، سانوریا رے ، نکلا تو ہرجائی۔۔"

جمیل اختر کی دوسری فلم مجاہد (1965) بھی ایک بھاری بھر کم فلم تھی جو 10 ستمبر 1965ء کو پاک بھارت جنگ کے دوران ریلیز ہوئی تھی۔ اس فلم کی ہائی لائٹ جنگی ترانہ "ساتھیو ، مجاہدو ، جاگ اٹھا ہے سارا وطن۔۔" تھا جو اس دور کا سب سے مقبول ترین ترانہ تھا۔ حمایت علی شاعر کے لکھے ہوئے اس ترانے کی دھن خلیل احمد نے بنائی تھی جبکہ مسعودرانا اور شوکت علی کے علاوہ اس گیت میں دیگر معاون گلوکاروں میں گلوکارہ نورجہاں بیگم (ملکہ ترنم نہیں) ، روشن ، نازش ، عطی اور ساتھی تھے۔ یہ کورس گیت اداکار عباس نوشہ (جو ایک کامیڈین تھے اور فلم ایک رات کے فلمساز بھی تھے) ، دیبا ، مینا شوری اور ساتھیوں پر فلمایا گیا تھا۔ فلم مجاہد (1965) کی کہانی اور مکالمے بھی ریاض شاہد نے لکھے تھے اور اس فلم میں سدھیر ، محمدعلی ، صابرہ سلطانہ اور اسلم پرویز دیگر اہم کردار تھے۔

جمیل اختر کی تیسری فلم مسٹر اللہ دتہ (1966) تھی جو ایک معاشرتی موضوع پر بنائی گئی ایک پنجابی فلم تھی جس کے مصنف بھی ریاض شاہد تھے۔ علاؤالدین نے ٹائٹل رول کیا تھا اور ان پر ایک بڑا دلچسپ گیت فلمایا گیا تھا "بھائیا اللہ دتیا ، دسیں کون جتیا۔۔" تنویرنقوی کا لکھا ہوا یہ گیت جو منظور اشرف کی دھن میں مسعودرانا نے گایا تھا ایک طنزیہ گیت تھا جس میں خود سے سوال کیا گیا تھا کہ 65ء کی جنگ کس نے جیتی تھی۔۔؟ اس گیت میں بھارتی فوجیوں کو کتوں سے تشبیع دی گئی تھی۔

جمیل اختر کی چوتھی فلم نظام لوہار (1966) تھی جو ایک اور بہت بڑی بھاری بھر کم فلم تھی۔ مجھے ذاتی طور پر جن پنجابی فلموں نے بے حد متاثر کیا تھا ان میں سے ایک فلم یہ بھی تھی۔ خاص طور پر فلم کا ٹائٹل رول کرنے والے عظیم اداکار علاؤالدین کے دو کرداروں نظام لوہار اور نظام ڈاکو اور گاؤں کی ایک ماچھن ، یاسمین کے عشق کو بڑے منفرد طریقے سے فلمایا گیا تھا۔ اس فلم کے فلمساز فیاض شیخ تھے جو اس فلم کے مصنف ریاض شاہد کے بھائی تھے۔ اس فلم کی سبھی گیت بڑے دلکش تھے جن کی دھنیں بخشی وزیر صاحبان نے بنائی تھیں اور گیت نگار تنویرنقوی تھے۔ اس فلم کا سب سے مقبول ترین گیت مسعودرانا کا گایا ہوا تھا "پیار کسے نال پاویں نہ۔۔" جو ریاض شاہد پر فلمایا گیا شاید اکلوتا گیت تھا۔

چار بھاری بھر کم فلموں کے بعد جمیل اختر ایک نئے روپ میں سامنے آئے جب انھوں نے ہلکی پھلکی رومانٹک فلمیں بنانا شروع کر دی تھیں۔ فلم کرشمہ اور ایک مسافر ایک حسینہ (1968) کے بعد فلم نیا سویرا (1970) ایک سیاسی موضوع پر بنائی گئی تھی جس میں بتایا گیا تھا کہ حکمرانوں کی ترجیحات اور روزمرہ عوامی مسائل میں کتنا فرق ہوتا ہے۔ لو ان یورپ (1970) یورپ میں فلمائی ہوئی ایک رومانٹک فلم تھی جس میں اٹلی کے مشہور شہر وینس کی قدرتی نہروں میں کشتی کی سیر کے دوران روزینہ اور کمال پر مالا اور مسعودرانا کا فلمایا ہوا یہ دلکش رومانٹک گیت تھا "شبنمی فضائیں ہیں ، نیلمی نظارے ہیں۔۔" خاموش نگاہیں (1971) اور جاپانی گڈی (1972) جاپان میں فلمائی گئی تھیں اور دونوں میں منورظریف مشترک تھے جن پر احمدرشدی کے کامیڈی گیت فلمائے گئے تھے "الف سے اچھی ، گاف سے گڑیا ، جیم سے جاپانی۔۔" ، "نئیں ریساں پاکستان دیاں ، اے گوریاں گوریاں کڑیاں کہن جاپان دیاں۔۔" اور "میم بلیئے ، آجا پاکستان ٹر چلئے۔۔" فلم ایک رات (1972) بہت بڑی رومانٹک اور میوزیکل فلم تھی جس میں خانصاحب مہدی حسن کی غزل "اک بار چلے آؤ۔۔" اور میڈم نورجہاں کا گیت "کس نے بجائی ہے یہ بانسریا۔۔" بڑے مقبول گیت تھے۔ فلم لاٹری (1974) میں جمیل اختر نے سدھیر کو ایک کامیڈی رول میں پیش کیا تھا اور ان پر احمدرشدی کا گیت "کی کری جاناں ایں۔۔" فلمایا گیا تھا جو اصل میں پنجابی شاعر استاد دامن کی ایک سیاسی نظم تھی جو انھوں نے وقت کے حکمران جناب ذوالفقار علی بھٹو کے بیرونی دوروں پر طنز کرتے ہوئے لکھی تھی۔ ان کی اگلی تین فلمیں چور نوں مور (1976) ، شیرا تے ببرا (1978) اور پشتو فلم دوست دشمن (1978) تھی۔ جمیل اختر کی آخری فلم ریشمی رومال (1984) تھی جو ایک انتہائی غیر میعاری فلم تھی اور لگتا تھا کہ اس فلم کے ہدایتکار کے طور پر ان کا نام استعمال ہوا ہے۔ اس فلم میں مسعودرانا کے دو بول تھے جن میں ایک شاہد کے لیے گایا گیا تھا "کفر دی اگ جے میرا جسم وی کر دے سوہا ، خاک چوں آوے گی صدا ، اللہ اکبر ، لاالہ الااللہ۔۔" جبکہ دوسرا منیر نیازی کے فلم شہید (1962) میں نسیم بیگم کے مشہور زمانہ گیت "اس بے وفا کا شہر ہے۔۔" کا ایک مصرعہ تھا "شام الم ڈھلی تو چلی درد کی ہوا ، راتوں کا پچھلا پہر ہے اور ہم ہیں دوستو۔۔"

جمیل اختر نے بطور ہدایتکار کل 16 فلمیں بنائی تھیں جن میں 8 اردو ، 7 پنجابی اور ایک پشتو تھی۔ ان کے علاوہ وہ 5 فلموں میں معاون ہدایتکار بھی تھے۔ ان کی ذاتی معلومات دستیاب نہیں ہیں۔

مسعودرانا کے جمیل اختر کی 5 فلموں میں 8 گیت

(3 اردو گیت ... 5 پنجابی گیت )
1
فلم ... مجاہد ... اردو ... (1965) ... گلوکار: مسعود رانا ، شوکت علی ، نور جہاں بیگم ، روشن ، نازش ، عطی مع ساتھی ... موسیقی: خلیل احمد ... شاعر: حمایت علی شاعر ... اداکار: عباس نوشہ ، مینا شوری ، دیبا مع ساتھی
2
فلم ... مسٹر اللہ دتہ ... پنجابی ... (1966) ... گلوکار: مسعود رانا ... موسیقی: منظور اشرف ... شاعر: تنویر نقوی ... اداکار: علاؤالدین
3
فلم ... مسٹر اللہ دتہ ... پنجابی ... (1966) ... گلوکار: مسعود رانا ... موسیقی: منظور اشرف ... شاعر: تنویر نقوی ... اداکار: علاؤالدین
4
فلم ... مسٹر اللہ دتہ ... پنجابی ... (1966) ... گلوکار: مسعود رانا ، شوکت علی مع ساتھی ... موسیقی: منظور اشرف ... شاعر: تنویر نقوی ... اداکار: اسد بخاری ، چوہان ، امداد حسین مع ساتھی
5
فلم ... نظام لوہار ... پنجابی ... (1966) ... گلوکار: مسعود رانا ... موسیقی: بخشی وزیر ... شاعر: تنویر نقوی ... اداکار: ریاض شاہد
6
فلم ... لو ان یورپ ... اردو ... (1970) ... گلوکار: مالا ، مسعود رانا ... موسیقی: ایم اشرف ... شاعر: تنویر نقوی ... اداکار: روزینہ ، کمال
7
فلم ... ریشمی رومال ... اردو ... (1984) ... گلوکار: مسعودرانا ... موسیقی: وجاہت عطرے ... شاعر: منیر نیازی ... اداکار: (پس پردہ)
8
فلم ... ریشمی رومال ... پنجابی ... (1984) ... گلوکار: مسعودرانا ... موسیقی: وجاہت عطرے ... شاعر: ؟ ... اداکار: (پس پردہ)

Masood Rana & Jameel Akhtar: Latest Online film

Nizam Lohar

(Punjabi - Black & White - Friday, 9 September 1966)


Masood Rana & Jameel Akhtar: Film posters
MujahidMr. Allah DittaNizam LoharLove in Europe
Masood Rana & Jameel Akhtar:

2 joint Online films

(1 Urdu and 1 Punjabi films)

1.09-09-1966Nizam Lohar
(Punjabi)
2.26-06-1970Love in Europe
(Urdu)
Masood Rana & Jameel Akhtar:

Total 5 joint films

(2 Urdu, 3 Punjabi films)

1.10-09-1965: Mujahid
(Urdu)
2.24-01-1966: Mr. Allah Ditta
(Punjabi)
3.09-09-1966: Nizam Lohar
(Punjabi)
4.26-06-1970: Love in Europe
(Urdu)
5.21-12-1984: Reshmi Rumal
(Punjabi)


Masood Rana & Jameel Akhtar: 8 songs in 5 films

(3 Urdu and 5 Punjabi songs)

1.
Urdu film
Mujahid
from Friday, 10 September 1965
Singer(s): Masood Rana, Shoukat Ali, Noorjehan Begum, Roshan, Nazish, Atti & Co., Music: Khalil Ahmad, Poet: , Actor(s): Abbas Nosha, Meena Shori, Deeba & Co.
2.
Punjabi film
Mr. Allah Ditta
from Monday, 24 January 1966
Singer(s): Masood Rana, Shoukat Ali & Co., Music: Manzoor Ashraf, Poet: , Actor(s): Asad Bukhari, Imdad Hussain & Co.
3.
Punjabi film
Mr. Allah Ditta
from Monday, 24 January 1966
Singer(s): Masood Rana, Music: Manzoor Ashraf, Poet: , Actor(s): Allauddin
4.
Punjabi film
Mr. Allah Ditta
from Monday, 24 January 1966
Singer(s): Masood Rana, Music: Manzoor Ashraf, Poet: , Actor(s): Allauddin
5.
Punjabi film
Nizam Lohar
from Friday, 9 September 1966
Singer(s): Masood Rana, Music: Bakhshi Wazir, Poet: , Actor(s): Riaz Shahed
6.
Urdu film
Love in Europe
from Friday, 26 June 1970
Singer(s): Mala, Masood Rana, Music: M. Ashraf, Poet: , Actor(s): Rozina, Kemal
7.
Urdu film
Reshmi Rumal
from Friday, 21 December 1984
Singer(s): Masood Rana, Music: Wajahat Attray, Poet: , Actor(s): (Playback)
8.
Punjabi film
Reshmi Rumal
from Friday, 21 December 1984
Singer(s): Masood Rana, Music: Wajahat Attray, Poet: , Actor(s): (Playback, Shahid)


پاکستان فلم میگزین ۔۔۔ سنہری فلمی یادوں کا امین

پاکستان فلم میگزین ، پاکستانی فلموں ، فلمی گیتوں اور فلمی فنکاروں پر اولین ، منفرد اور ایک بے مثل معلوماتی اور تفریحی ویب سائٹ ہے جو 3 مئی 2000ء سے مسلسل اپ ڈیٹ ہورہی ہے۔ یہ ایک انفرادی کاوش ہے جو فارغ اوقات کا ایک بہترین مشغلہ بھی ہے۔ یہ تاریخ ساز ویب سائٹ کبھی نہ بن پاتی ، اگر پاکستانی فلموں میں میرے آئیڈیل گلوکار جناب مسعودرانا صاحب کے گیت نہ ہوتے۔ اس عظیم گلوکار کو ایک منفرد خراج تحسین پیش کرنے کے لئے اس کے گائے ہوئے ایک ہزار سے زائد گیتوں کا پہلا اردو ڈیٹابیس بنایا گیا ہے جس میں ریکارڈ محفوظ رکھنے کے علاوہ دیگر ساتھی فنکاروں پر تفصیلی مضامین بھی شائع کئے جارہے ہیں۔

تازہ ترین اپ ڈیٹس




Pakistan Film Magazine

The first and largest website on Pakistani films, music and artists with chronological film history since 1913, useful information's, facts & figures, milestones, filmo- & songographies, images, videos and Urdu/Punjabi articles on various film topics.



Yarana
Yarana
(2008)
Hukumat
Hukumat
(1988)
12 Bajay
12 Bajay
(1961)
Permit
Permit
(1979)



Artists database

Useful information's with detailed film records, milestones, videos, images etc..


Click on any category from the menu below and read more information's..