A Tribute To The Legendary Playback Singer Masood Rana

Masood Rana - مسعودرانا Masood Rana sang 1047 songs in 652 films

مسعودرانا اور علی حسین

    تم ضد تو کر رہے ہو ، ہم کیا تمہیں بتائیں۔۔
    نغمے جو کھو گئے ہیں ، ان کو کہاں سے لائیں۔۔؟

ہدایتکار احتشام کی نغماتی فلم داغ (1969) میں نغمہ نگار اختریوسف کے لکھے ہوئے یہ خوبصورت بول شہنشاہ غزل خانصاحب مہدی حسن کی مدھر آواز میں تھے۔ اس شاہکار گیت کی دھن بنانے والے موسیقار کا نام ، علی حسین کا تھا۔ دلچسپ بات یہ ہے کہ سابقہ مشرقی پاکستان میں بنائی جانے والی پانچ درجن کے قریب اردو فلموں میں پونے چار سو کے قریب گیت گائے گئے تھے جن میں سے ایک تہائی مردانہ گیت تھے۔ لیکن علی حسین کے سوا دیگر پندرہ موسیقاروں میں سے کسی ایک نے بھی مہدی حسن سے ڈھاکہ کی اردو فلموں کے لیے کبھی کوئی گیت نہیں گوایا تھا۔ ساٹھ کی دھائی میں ویسے بھی خانصاحب کے زیادہ فلمی گیت نہیں ہوتے تھے اور ان کے عروج کا دور ستر کی دھائی میں تھا۔

موسیقار علی حسین نے صرف چھ اردو فلموں کی موسیقی ترتیب دی تھی اور چار فلموں چھوٹے صاحب (1967) ، قلی (1968) ، داغ اور اناڑی (1969) میں متعدد گیت مقبول ہوئے تھے۔ ان کے علاوہ دیگر موسیقاروں میں روبن گھوش نے ڈھاکہ کی سب سے زیادہ فلموں کی موسیقی ترتیب دی تھی۔ ان کی فلموں ، تلاش (1962) ، بھیا (1966) اور چکوری (1967) کے گیت مقبول ہوئے تھے۔ خان عطاالرحمان نے دوسرے نمبر پر سب سے زیادہ فلموں کی موسیقی ترتیب دی تھی۔ ان کی فلموں ملن (1964) اور بہانا (1965) کے گیتوں کو پذیرائی ملی تھی۔ گلوکار بشیراحمد ایک ہرفن مولا فنکار تھے جو گاتے بھی تھے ، دھنیں بھی بناتے تھے اور گیت بھی لکھتے تھے۔ ان کی فلم درشن (1967) ، آل راؤنڈ کارکردگی کی ایک شاندار مثال تھی۔ سبل داس کی فلم پیاسا (1969) کے چند گیت بھی مقبول ہوئے تھے اور کریم شہاب الدین نے فلم چاند اور چاندنی (1968) کی موسیقی ترتیب دے کر میلہ ہی لوٹ لیا تھا۔

موسیقار علی حسین کی پہلی فلم ڈاک بنگلہ (1966) تھی جو ایک گمنام فلم تھی۔ انھیں پہچان ، ہدایتکار مستفیض کی بنگالی/اردو ڈبل ورژن فلم چھوٹے صاحب (1967) سے ملی تھی جو ندیم کی ریلیز ہونے والی دوسری فلم تھی۔ پہلی فلم چکوری (1967) کے بعد یہ فلم بھی کراچی میں سپرہٹ ہوئی تھی اور گولڈن جوبلی کر گئی تھی۔ یقیناً لوکل بوائے ندیم صاحب کا جادو سر چڑھ کر بولا ہوگا۔ اس فلم کے اردو اور بنگالی ورژن نیٹ پرموجود ہیں۔ اس فلم کے اردو ورژن میں احمدرشدی اور مالا کے متعدد گیت سننے میں آتے تھے "ادا تیری بانکی ہے ، روپ سہانا ۔ اس پہ غضب ہے تیرا روٹھ کے جانا ، ماشاءاللہ ، کیا حسین چال ہے ، توبہ توبہ ، وہ برا حال ہے۔۔" اور "آنکھوں کے گلابی ڈورے ، زلفوں کا مہکتا سایہ ، اس شوخ سے مل کر ہم نے انمول خزانہ پایا ، یارو ، ہم بھی محبت کر بیٹھے ، نشیلی نگاہوں پہ مر بیٹھے۔۔" اور "میرے ہمراہی ، میرا ساتھ نبھانا۔۔" وغیرہ۔ بنگالی ورژن میں یہ گیت دوسرے گلوکاروں نے گائے تھے اور ندیم اور شبانہ پر فلمائے گئے تھے۔

عام طور پر ڈھاکہ میں جب ایک بنگالی فلم بنتی تھی تو اس کے اردو گیت (اور شاید مکالموں کی ڈبنگ بھی) لاہور میں کی جاتی تھی۔ اس طرح مغربی پاکستان کے مصروف گلوکاروں کو ڈھاکہ جانے کی زحمت نہیں ہوتی تھی۔ ماضی کی فلمی تاریخ پر ایک نظر ڈالنے کے بعد بنگالی فلمسازوں کو داد دینا پڑتی ہے کہ وہ واقعی پیشہ وارانہ سوچ کے حامل ہوتے تھے اور اپنی بنگالی فلموں کے اردو ورژن کے لیے خالص اردو زبان میں گیت لکھواتے اور گواتے تھے جن میں ادبی چاشنی بھی ہوتی تھی۔ اس کے برعکس نوے کی دھائی کے پنجابی فلمساز ، اسقدر نکمے اور ہڈحرام ہوتے تھے کہ پنجابی گیتوں کو من و عن اردو ورژن میں بھی شامل کردیتے تھے یا ان گیتوں کے بول لفظ بہ لفظ ترجمہ کر کے گواتے تھے جس سے اردو فلم بینوں کی برہمی قابل فہم ہوتی تھی۔ پنجابی اور اردو ، دو الگ الگ زبانیں ہیں اور ان کا انداز بیاں بھی مختلف ہے۔ پنجابی زبان میں جہاں سادگی ، بے ساختگی اور معصومیت ہوتی ہے وہاں اردو زبان میں ادب و آداب ، تکلفات اور تصنع کا غلبہ ہوتا ہے۔ اگر اس دور کی فلموں کے گیتوں پر توجہ دی جاتی تو یقیناً ڈبل ورژن پنجابی/اردو فلموں کا آئیڈیا ناکام نہ ہوتا۔

موسیقار علی حسین کی اگلی فلم قلی (1968) بھی ایک نغماتی فلم تھی جس کے ہدایتکار مستفیض تھے۔ ندیم ، شبانہ ، عظیم اور نینا مرکزی کرداروں میں تھے۔ اس فلم میں علی حسین نے پہلی بار مسعودرانا سے گیت گوائے تھے۔ دو گیت تو روایتی تھے "ملے اس طرح دل کی دنیا جگا دی ، خدا کی قسم تو نے ہلچل مچا دی۔۔" اور "اک نیا غم ہے ، خدا خیر کرے۔۔" لیکن فلم کا سب سے اہم گیت احمدرشدی اور مسعودرانا کا ماں جیسے مقدس رشتے کے بارے میں گایا ہوا ایک لاجواب گیت تھا "قدموں میں تیرے جنت میری ، تجھ سا کوئی کہاں ، اے ماں ، پیاری ماں۔۔" ندیم اور عظیم پر فلمایا ہوا یہ شاہکار گیت اداکارہ نینا کے لیے گایا جاتا ہے جو فلم بینوں پر بڑے گہرے اثرات چھوڑتا ہے۔ ہمارے ہاں عام طور پر ایسے بامقصد گیتوں کو اہمیت نہیں دی جاتی اور عشق و محبت جیسے بے ہودہ اور فضول قسم کے گیتوں کو عام کیا جاتا رہا ہے جن کا ہماری تہذیب و تمدن سے دور دور کا واسطہ نہیں ہوتا۔ مہذب اور شریف مسلم گھرانوں میں ایسے گیت سننا اور گنگنانا انتہائی معیوب سمجھا جاتا تھا۔

علی حسین کی فلم داغ (1969) مقبول گیتوں کے لحاظ سے ان کی سب سے بہترین فلم تھی۔ اس فلم کے سب سے مقبول گیت "تم ضد تو کررہے ہو۔۔" کا ذکر اوپر ہوچکا ہے۔ اس فلم میں احمدرشدی کے دو سولو گیت بھی بڑے پسند کیے گئے تھے "لب پر تیرا نام ، ہاتھ میں غم کا جام۔۔" کے علاوہ یہ گیت سبینہ یاسمین نے بھی گایا تھا "دیکھ میں کتنی آس لگائے ، آیا تیرے پاس ، آواز دے۔۔" اس فلم میں مسعودرانا کا ایک مزاحیہ گیت نوبیتا نامی گلوکارہ کے ساتھ تھا "ملنے کا موقع ہے ، گلے لگ جا۔۔" ایک عام سا گیت تھا لیکن یہ گیت ان گیتوں میں سے ایک ہے جو مسعودرانا کو پاکستان کی فلمی تاریخ کا منفرد گلوکار بنا دیتے ہیں "آجاؤ ، ذرا مل بیٹھیں ہم ، کچھ کہہ لیں گے ، کچھ سن لیں گے۔۔" انتہائی دھیمی سروں میں گائی ہوئی یہ ایک غزل تھی جو علی حسین کی فلم میں روبن گھوش نے ایک دوگانے کی صورت میں کمپوز کی تھی ، ساتھی گلوکارہ آئرن پروین تھی۔ ندیم اور شبانہ پر یہ سبھی گیت فلمائے گئے تھے اور ہدایتکار احتشام تھے۔

ہدایتکار مستفیض کی فلم اناڑی (1969) میں موسیقار علی حسین کا کمپوز کیا ہوا صرف ایک ہی گیت مقبول ہوا تھا "لکھے پڑھے ہوتے اگر تو تم کو خط لکھتے۔۔" یہ گیت ندیم اور سبینہ یاسمین نے الگ الگ گایا تھا۔ ندیم اور شبانہ ، متحدہ پاکستان کے دور میں ڈھاکہ کی کسی آخری فلم میں ایک ساتھ نظر آئے تھے۔

ہدایتکار احتشام کی ڈبل ورژن فلم پائل (1970) ، علی حسین کی آخری فلم تھی جس میں ان کا صرف ایک ہی گیت تھا جو انھوں نے مسعودرانا اور نوبیتا سے گوایا تھا "ہو ، بل کھاتی ندیا ، لہروں میں لہرائے۔۔" اس فلم کے کیلنڈر پر اداکارہ شبانہ کی تصویر اور پس منظر میں پہاڑی علاقہ اور جھیل کا منظر کبھی نہیں بھلا سکا۔ میرے ذہن پر بچپن ہی سے مشرقی پاکستان کا ایسا ہی ایک تصور ہوتا تھا اور ندی نالوں ، سرسبز وادیوں اور دلکش پہاڑوں کی یہ سرزمین ایک خواب ناک سا ماحول لگتی تھی۔ بدقسمتی سے غاصب اور جابر حکمرانوں نے ہوس اقتدار میں اسے جہنم بنا دیا تھا اور بدنامی کا ایک انمٹ داغ پوری قوم کے ماتھے پر لگوالیا تھا۔۔!

بنگلہ دیش کے قیام کے بعد علی حسین نے ایک طویل عرصہ تک بہت سی بنگالی فلموں کی موسیقی ترتیب دی تھی۔ سال رواں کے آغاز میں علاج کی غرض سے امریکہ گئے جہاں 14 فروری 2021ء کو انھوں نے فیس بک پر اپنا آخری میسیج بھیجا جس میں یہ انکشاف کیا کہ ان کے پھیپھڑوں میں کینسر کی تشخیص ہوئی ہے جو آخری سٹیج پر ہے اور ان کے لیے دعا کی جائے۔ اپنے لیے انھوں نے خود ہی جنت کی دعا کی اور میسیج کی آخری لائن میں اس توقع کا اظہار کیا کہ ان کی دھنیں شائقین کو ایک عرصہ تک محظوظ رکھیں گی۔ صرف تین دن بعد 17 فروری 2021ء کو خالق حقیقی سے جا ملے تھے۔۔!

مسعودرانا اور علی حسین کے 5 فلمی گیت

5 اردو گیت ... 0 پنجابی گیت
1
فلم ... قلی ... اردو ... (1968) ... گلوکار: احمد رشدی ، مسعود رانا ... موسیقی: علی حسین ... شاعر: سرور بارہ بنکوی ... اداکار: ندیم ، عظیم
2
فلم ... قلی ... اردو ... (1968) ... گلوکار: مسعود رانا ... موسیقی: علی حسین ... شاعر: سرور بارہ بنکوی ... اداکار: ندیم
3
فلم ... قلی ... اردو ... (1968) ... گلوکار: مسعود رانا مع ساتھی ... موسیقی: علی حسین ... شاعر: سرور بارہ بنکوی ... اداکار: ندیم مع ساتھی
4
فلم ... داغ ... اردو ... (1969) ... گلوکار: مسعود رانا ، نبیتا ... موسیقی: علی حسین ... شاعر: اختر یوسف ... اداکار: سہیل ، کوبیتا
5
فلم ... پائل ... اردو ... (1970) ... گلوکار: مسعود رانا ، نبیتا ... موسیقی: علی حسین ... شاعر: اختر یوسف ... اداکار: جاوید ، شبانہ

مسعودرانا اور علی حسین کے 2سولو گیت

1ملے اس طرح دل کی دنیا جگا دی ، خدا کی قسم تو نے ہلچل مچا دی ... (فلم ... قلی ... 1968)
2ایک نیا غم ہے ، کوئی برہم ہے ، خدا خیر کرے ... (فلم ... قلی ... 1968)

مسعودرانا اور علی حسین کے 3دو گانے

1قدموں میں تیرے جنت میری ، تجھ سا کوئی کہاں ، اے ماں ، پیاری ماں ... (فلم ... قلی ... 1968)
2ملنے کا موقع ہے گلے لگ جا ... (فلم ... داغ ... 1969)
3ہو بل کھاتی ندیا ، لہروں میں لہرائے ، کرے کنگن یہ سن سن ، نیا کنارے چلی جائے رے ... (فلم ... پائل ... 1970)

مسعودرانا اور علی حسین کے 0کورس گیت


Masood Rana & Ali Hossain: Latest Online film

Payel

(Bengali/Urdu double version - Black & White - Friday, 22 May 1970)


Masood Rana & Ali Hossain: Film posters
QulliDaaghPayel
Masood Rana & Ali Hossain:

2 joint Online films

(2 Urdu and 0 Punjabi films)

1.1969: Daagh
(Urdu)
2.1970: Payel
(Bengali/Urdu double version)
Masood Rana & Ali Hossain:

Total 3 joint films

(2 Urdu, 0 Punjabi films)

1.1968: Qulli
(Urdu)
2.1969: Daagh
(Urdu)
3.1970: Payel
(Bengali/Urdu double version)


Masood Rana & Ali Hossain: 5 songs

(5 Urdu and 0 Punjabi songs)

1.
Urdu film
Qulli
from Friday, 7 June 1968
Singer(s): Ahmad Rushdi, Masood Rana, Music: Ali Hossain, Poet: , Actor(s): Nadeem, Azeem
2.
Urdu film
Qulli
from Friday, 7 June 1968
Singer(s): Masood Rana & Co., Music: Ali Hossain, Poet: , Actor(s): Nadeem & Co.
3.
Urdu film
Qulli
from Friday, 7 June 1968
Singer(s): Masood Rana, Music: Ali Hossain, Poet: , Actor(s): Nadeem
4.
Urdu film
Daagh
from Friday, 4 April 1969
Singer(s): Masood Rana, Nabita, Music: Ali Hossain, Poet: , Actor(s): Sohail, Kobita
5.
Urdu film
Payel
from Friday, 22 May 1970
Singer(s): Masood Rana, Naveeta, Music: Ali Hossain, Poet: , Actor(s): Javed, Shabana


پاکستان فلم میگزین ۔۔۔ سنہری فلمی یادوں کا امین

پاکستان فلم میگزین ، پاکستانی فلموں ، فلمی گیتوں اور فلمی فنکاروں پر اولین ، منفرد اور ایک بے مثل معلوماتی اور تفریحی ویب سائٹ ہے جو 3 مئی 2000ء سے مسلسل اپ ڈیٹ ہورہی ہے۔ یہ ایک انفرادی کاوش ہے جو فارغ اوقات کا ایک بہترین مشغلہ بھی ہے۔ یہ تاریخ ساز ویب سائٹ کبھی نہ بن پاتی ، اگر پاکستانی فلموں میں میرے آئیڈیل گلوکار جناب مسعودرانا صاحب کے گیت نہ ہوتے۔ اس عظیم گلوکار کو ایک منفرد خراج تحسین پیش کرنے کے لئے اس کے گائے ہوئے ایک ہزار سے زائد گیتوں کا پہلا اردو ڈیٹابیس بنایا گیا ہے جس میں ریکارڈ محفوظ رکھنے کے علاوہ دیگر ساتھی فنکاروں پر تفصیلی مضامین بھی شائع کئے جارہے ہیں۔

تازہ ترین اپ ڈیٹس




Pakistan Film Magazine

The first and largest website on Pakistani films, music and artists with chronological film history since 1913, useful information's, facts & figures, milestones, filmo- & songographies, images, videos and Urdu/Punjabi articles on various film topics.



Kataksha
Kataksha
(2019)
Hathkari
Hathkari
(1975)
Chambeli
Chambeli
(2013)
Gumnam
Gumnam
(1954)



Artists database

Useful information's with detailed film records, milestones, videos, images etc..


Click on any category from the menu below and read more information's..