A Tribute To The Legendary Playback Singer Masood Rana

Masood Rana - مسعودرانا Masood Rana sang 1037 songs in 647 films

مسعودرانا اور ارشد کاظمی

فلمساز ، ہدایتکار اور مصنف ارشدکاظمی ، بنیادی طور پر ایک صحافی تھے جو روزنامہ زمیندار لاہور سے منسلک تھے۔ فلمی دنیا میں آمد کہانی نویس کے طور پر ہوئی تھی۔ پہلی فلم نیلم (1963) تھی جس کے فلمساز اور منظرنامہ لکھنے والے شباب کیرانوی اور مکالمہ نگار شاطرغزنوی تھے۔ ہدایتکار کے طور پر اے حمید کا نام ملتا ہے۔ فلم کا ٹائٹل رول ایک سفید گھوڑی کے علاوہ اداکارہ رخسانہ نے کیا تھا جو فرسٹ ہیروئن تھی جبکہ نغمہ سیکنڈ ہیروئن تھی۔ منورظریف کو پہلی بار اس فلم میں ایک اہم رول ملا تھا۔ سدھیر کی شباب پروڈکشنز کے ساتھ یہ اکلوتی فلم تھی۔ فلم پانی ، بھرجائی (1964) اور جاگیردار (1967) کی کہانیاں بھی کاظمی صاحب کے زور قلم کا نتیجہ تھیں جن کے ہیرو اکمل اور ہیروئنیں شیریں اور نغمہ تھیں۔ فلم کھوٹا پیسہ (1965) اکلوتی فلم تھی جس کے فلمساز اور کہانی نویس کے طور پر ان کا نام آتا ہے۔ راجہ حفیظ ، ہدایتکار تھے جبکہ محمدعلی اور سلونی کی جوڑی تھی۔

ارشدکاظمی نے بطور ہدایتکار صرف دو فلمیں بنائی تھیں جن میں پہلی فلم تابعدار (1966) تھی۔ اس فلم کی کہانی اور منظرنامہ انھی کا لکھا ہوا تھا جبکہ مکالمے بشیرنیاز کے تحریر کردہ تھے۔ اس پنجابی فلم میں انھوں نے پہلی بار رنگیلا کو ٹائٹل رول میں پیش کیا تھا جو ایک اشارتی کردار تھا جسے پاکستانی حکومتوں کی طرح ہر کسی سے ادھار مانگنے کی عادت ہوتی ہے۔ یہاں تک کہ وہ آئینے میں اپنی شکل دیکھ کر بھی ادھار مانگ لیتا ہے۔ اس فلم میں دو بڑے پرمغز جملے سننے کو ملتے ہیں کہ مانگنے کا عادی تو ملک الموت سے بھی ادھار مانگ لیتا ہے اور یہ کہ مانگنے والوں کی جھولی ہمیشہ خالی رہتی ہے۔ دور ایوبی میں بھی اظہار و بیان پر بڑی سخت پابندیاں ہوتی تھیں اور وطن عزیز میں سچی بات کرنی ہمیشہ سے بڑی مشکل رہی ہے۔ فلم ، تفریح کا سب سے بڑا میڈیم ہوتا تھا جس میں چند باشعور لوگ ایسی سیاسی شرارتیں کیا کرتے تھے۔ اس وقت امریکی تابعداری میں پاکستان کی فاقہ مستی کا یہ عالم تھا کہ پورا ملک مفت اور قرض کی مے پہ پل رہا تھا اور مانگنے کی ایسی عادت پڑ گئی تھی کہ آج بھی ہمارا قومی تشخص ایک کشکول ہے۔ یہ کوئی حیرت کی بات نہیں کہ بڑی اکڑفوں رکھنے والا ہمارا ڈمی پرائم منسٹر بھی چند ڈالروں کی خاطر ایک معمولی عرب شہزادے کا ڈرائیور بن جاتا ہے اور عملی طور پر گفتار کا غازی اور کردار کا نیازی ثابت ہوتا ہے۔

Aliya and Rangeela in film Tabedar (1966)
عالیہ اور رنگیلا فلم تابعدار (1966) میں
فلم تابعدار (1966) میں پہلی بار عالیہ کو ایک بھرپور کردار ملا تھا اور اس پر تین گیت بھی فلمائے گئے تھے جن میں اس نے اپنے رقص کا بھرپور مظاہرہ کیا تھا البتہ ڈائیلاگ ڈلیوری کمزورتھی۔ عالیہ ، ارشدکاظمی کی سوتیلی بیٹی تھی جس کی ماں ممتاز بانو تھی اور جس کا نام فلم دھی رانی (1969) کے فلمساز کے طور پر آتا ہے۔ اس فلم میں عالیہ اور رنگیلا پر فلمائے گئے یہ دونوں گیت بڑے دلچسپ تھے "اے بندے جہیڑے تو لیاندے ، کن وچ کردے گلاں ، وے میں نال مجاجاں چلاں۔۔" (نسیم بیگم ، منیرحسین) اور "اے حسن تیرا دن چار ، اڑیئے لٹ لے موج بہار۔۔" (شوکت علی ، نذیربیگم)

Actor Faizi
اداکار فیضی
اسی فلم میں ایک کوتاہ کامت اداکار فیضی نے بھی ایک اہم رول کیا تھا۔ موصوف ایم اے پاس تھے اور اپنے چہرے مہرے سے معذور نہیں لگتے تھے۔ چند فلموں میں انھوں نے سنجیدہ کردار بھی کیے تھے لیکن اپنے جسمانی عیب کی وجہ سے انھیں صرف مزاح کے قابل سمجھا گیا تھا جو ہمارے معاشرے کا ایک بہت بڑا المیہ رہا ہے کہ جہاں ایسے معذور لوگوں کو باعث استہزا سمجھا جاتا ہے۔ پاکستانی فلموں ، ٹی وی چینلوں اور سٹیج ڈراموں میں ہمیشہ سے ایسے معذور افراد کو تختہ مشق بنایا جاتا رہا ہے اور مزاح کے نام پر بڑا بھونڈا مذاق اڑایا جاتا ہے۔ منافقت کی انتہا دیکھیے کہ پھر بڑی بے شرمی اور ڈھٹائی سے اخلاقیات پر درس بھی دیا جاتا ہے اور خود کو انتہائی مہذب ثابت کرنے کی کوشش بھی کی جاتی ہے۔۔!

ارشدکاظمی کی فلم تابعدار (1966) پہلی فلم تھی جس میں مسعودرانا کا گایا ہوا ، بابا عالم سیاہ پوش کا لکھا ہوا اور موسیقار رحمان ورما کا کمپوز کیا ہوا تھیم سانگ "پنجرہ رہ جاؤ خالی ، پنچھی اڈ جانا ، جے لنگ گیا اے ویلا ، مڑ کے نئیں آنا۔۔" فلم کی ہائی لائٹ تھا۔ یہ ایک انتہائی اعلیٰ پائے کا سبق آموز گیت تھا جو ریڈیو پر جب بجتا تھا تو لوگ دم بخود ہو کر سنتے تھے۔ یہ گیت کسی ایکسٹرا اداکار پر فلمایا گیا تھا جو اداکارہ زینت کے پس منظر میں گاتا ہے۔ اس فلم کی روایتی جوڑی شیریں اور اکمل کی تھی۔ الیاس کاشمیری مرکزی ولن ہوتے ہیں جو اپنی بیٹی شیریں کی اکمل سے شادی کی انوکھی شرط عائد کرتے ہیں کہ بدلے میں اکمل کی ماں ، زینت ، ان سے شادی کرے۔۔!

ارشدکاظمی کی بطور ہدایتکار دوسری اور آخری فلم ایک یادگار نغماتی پنجابی فلم دھی رانی (1969) تھی۔ اس کی فلمساز ممتاز بانو تھی جو ان کی منکوحہ تھی۔ اس نے اپنی بیٹی عالیہ کو اس فلم میں پہلی بار فرسٹ ہیروئن کے طور پر کاسٹ کیا تھا اور اس کا پہلا ہیرو اقبال حسن تھا۔ فلم کی کہانی اور منظرنامہ کاظمی صاحب کا اپنا تھا اور مکالمے بشیرنیاز اور سکیدار نے لکھے تھے۔ ساون اپنے عروج پر تھے جبکہ سلمیٰ ممتاز اور ناصرہ کے علاوہ اس فلم میں سلطان راہی مرکزی ولن تھے۔ کامیڈی کا شعبہ منورظریف ، ننھا اور رضیہ کا تھا۔ اس فلم کا سب سے بھاری بھر کم شعبہ اس کے گیت تھے جو خواجہ پرویز نے لکھے تھے اور ایم اشرف نے سپرہٹ دھنیں بنائی تھیں۔ سب سے مقبول ترین گیت ملکہ ترنم نورجہاں کا گلی گلی گونجنے والا یہ عوامی گیت تھا:
  • میری چچی دا چھلا ماہی لاہ لیا ، گھر جا کے شکایت لاواں گی۔۔
اس فلم میں میڈم کے دیگر تینوں گیت بھی بڑے مقبول ہوئے تھے:
  • پٹھے سدھے بودے واہ کے شہری بابو لنگدا ، سدھی سادھی پنڈ دی کڑی دا دل منگدا۔۔
  • میں آں تیرے نال تینوں کاہدی پرواہ وے۔۔
  • صدقے صدقے لال قلندر ، جھولے جھولے لال قلندر ، سہیون دا سرکار قلندر۔۔
ان کے علاوہ میڈم نورجہاں کا مسعودرانا کے ساتھ گایا ہوا یہ دوگانا بھی سپرہٹ ہوا تھا:
  • وے لکھ ترلے پاویں منڈیا ، وے تینوں پیار نئیں کرنا
    نی ساڈا دل سانوں واپس کر دے ، نی جے تو پیار توں ڈرنا۔۔
Dhee Rani (1969)
کراچی کے گوڈین سینما پر فلم دھی رانی (1969)
عالیہ اور اقبال حسن پر فلمائے ہوئے اس شوخ و چنچل گیت میں جب دونوں بار بار "آہوں آہوں۔۔" کہتے ہیں تو بڑا مزہ آتا ہے۔ میڈم نورجہاں کی اجارہ داری کے اس دور میں آئرن پروین اور نسیم بیگم کا گایا ہوا ایک ایک گیت گمنام رہا تھا جبکہ فلم کے ٹائٹل بول عنایت حسین بھٹی کی آواز میں تھے۔

فلم دھی رانی (1969) سے کاظمی صاحب کو خاصی توقعات وابستہ رہی ہوں گی لیکن یہ فلم اپنے سپرہٹ گیتوں کے باوجود اپنی کمزور کہانی اور نئی کمزور جوڑی کی وجہ سے باکس آفس پر کمزور رہی تھی۔ ویسے بھی اس دور میں مقابلہ بڑا سخت ہوتا تھا۔ شاید یہی وجہ تھی کہ اس کے بعد ان کے کریڈٹ پر کوئی فلم نہیں ملتی۔ ارشدکاظمی کا 1981ء میں انتقال ہو گیا تھا۔

مسعودرانا کے ارشد کاظمی کی 2 فلموں میں 2 گیت

(0 اردو گیت ... 2 پنجابی گیت )
1
فلم ... تابعدار ... پنجابی ... (1966) ... گلوکار: مسعود رانا ... موسیقی: رحمان ورما ... شاعر: بابا عالم سیاہ پوش ... اداکار: ؟ (زینت)
2
فلم ... دھی رانی ... پنجابی ... (1969) ... گلوکار: نورجہاں ، مسعود رانا ... موسیقی: ایم اشرف ... شاعر: خواجہ پرویز ... اداکار: عالیہ ، اقبال حسن

Masood Rana & Arshad Kazmi: Latest Online film

Tabedar

(Punjabi - Black & White - Friday, 9 December 1966)


Masood Rana & Arshad Kazmi: Film posters

Masood Rana & Arshad Kazmi:

1 joint Online films

(0 Urdu and 1 Punjabi films)

1.09-12-1966Tabedar
(Punjabi)
Masood Rana & Arshad Kazmi:

Total 2 joint films

(0 Urdu, 2 Punjabi films)

1.09-12-1966: Tabedar
(Punjabi)
2.24-10-1969: Dhee Rani
(Punjabi)


Masood Rana & Arshad Kazmi: 2 songs in 2 films

(0 Urdu and 2 Punjabi songs)

1.
Punjabi film
Tabedar
from Friday, 9 December 1966
Singer(s): Masood Rana, Music: Rehman Verma, Poet: , Actor(s): ? (Zeenat)
2.
Punjabi film
Dhee Rani
from Friday, 24 October 1969
Singer(s): Noorjahan, Masood Rana, Music: M. Ashraf, Poet: , Actor(s): Aliya, Iqbal Hassan


Pakistan Film Magazine

The first and largest website on Pakistani films, music and artists.



پاکستان فلم میگزین ۔۔۔ سنہری فلمی یادوں کا امین

پاکستان فلم میگزین ، پاکستانی فلموں ، فلمی گیتوں اور فلمی فنکاروں پر اولین ، منفرد اور ایک بے مثل معلوماتی اور تفریحی ویب سائٹ ہے جو 3 مئی 2000ء سے مسلسل اپ ڈیٹ ہورہی ہے۔ یہ ایک انفرادی کاوش ہے جو فارغ اوقات کا ایک بہترین مشغلہ بھی ہے۔ یہ تاریخ ساز ویب سائٹ کبھی نہ بن پاتی ، اگر پاکستانی فلموں میں میرے آئیڈیل گلوکار جناب مسعودرانا صاحب کے گیت نہ ہوتے۔ اس عظیم گلوکار کو ایک منفرد خراج تحسین پیش کرنے کے لئے اس کے گائے ہوئے ایک ہزار سے زائد گیتوں کا پہلا اردو ڈیٹابیس بنایا گیا ہے جس میں ریکارڈ محفوظ رکھنے کے علاوہ دیگر ساتھی فنکاروں پر تفصیلی مضامین بھی شائع کئے جارہے ہیں۔