A Tribute To The Legendary Playback Singer Masood Rana

Masood Rana - مسعودرانا Masood Rana sang 1035 songs in 648 films

مسعودرانا کی آخری فلم

مسعودرانا کی آخری فلم سجرا پیار 16 نومبر 2016ء کو لاہور کے نگینہ سینما میں ریلیز ہوئی تھی۔ یہ اداکار اکمل کے مداحوں کی ایک کوشش تھی جنہوں نے ان کی یاد میں اس غیر ریلیز شدہ فلم کو ریلیز کیا تھا۔ اداکار اکمل کا انتقال 11 جون 1967ء کو ہوا تھا جس کا مطلب یہ تھا کہ یہ فلم اس تاریخ سے پہلے بن رہی تھی لیکن مکمل ہونے کے باوجود کبھی ریلیز نہ ہو سکی تھی۔ گویا پچاس سال یا نصف صدی بعد یہ فلم سینما کی زینت بنی تھی جس کے بیشتر فنکار اس دنیا سے کوچ کر چکے ہیں۔ فلم کا ہدایتکار ساحل فارانی صرف ایک ہی فلم بنا سکا جبکہ فلم کے جانے پہچانے اداکاروں میں سے صرف فردوس اور زمرد ہی با حیات ہیں لیکن باقی سبھی فنکار ، جن میں اکمل ، اجمل ، مظہرشاہ ، ظہورشاہ ، گل زمان ، منورظریف ، رنگیلا ، سلمیٰ ممتاز ، تانی ، سائیں اختر اور امدادحسین کے علاوہ حزیں قادری ، نسیم بیگم ، فضل حسین اور مسعودرانا بھی اس دنیا سے گزر گئے ہیں لیکن ان کے گیت ہمیشہ گونجتے رہیں گے۔ مسعودرانا کے اپنے عروج کے دور میں گائے ہوئے اس فلم میں دو انتہائی اعلیٰ پائے کے گیت تھے جو فلم کی ہائی لائٹ تھے۔ فلم کا پہلا گیت:

ایک تھیم سانگ تھا جو حیرت انگیز طور پر سائیں اختر پر فلمایا گیا تھا جو خود ایک گلوکار تھے۔ مسعودرانا کا دوسرا گیت:

کسی گمنام اداکار پر فلمایا گیا تھا جو یہ گیت فلم کے مرکزی کرداروں فردوس اور اکمل کے لئے گاتا ہے۔ اس فلم کے موسیقار ایم وارث تھے جن کے کریڈٹ پر اس فلم کے علاوہ تین اور فلمیں تھیں۔ فلم ، کہانی اور ڈائریکشن کے لحاظ سے بڑی کمزور تھی لیکن اب تک کی معلومات کے مطابق یہ مندرجہ بالا سبھی فنکاروں کی آخری فلم ثابت ہوئی تھی۔


Pakistan Film Magazine

The most comprehensive source to the history of Pakistani films, music and artists.



پاکستان فلم میگزین ۔۔۔ سنہری فلمی یادوں کا امین

پاکستان فلم میگزین ، پاکستانی فلموں ، فلمی گیتوں اور فلمی فنکاروں پر اولین ، منفرد اور ایک بے مثل معلوماتی اور تفریحی ویب سائٹ ہے جو 3 مئی 2000ء سے مسلسل اپ ڈیٹ ہورہی ہے۔ یہ ایک انفرادی کاوش ہے جو فارغ اوقات کا ایک بہترین مشغلہ بھی ہے۔ یہ تاریخ ساز ویب سائٹ کبھی نہ بن پاتی ، اگر پاکستانی فلموں میں میرے آئیڈیل گلوکار جناب مسعودرانا صاحب کے گیت نہ ہوتے۔ اس عظیم گلوکار کو ایک منفرد خراج تحسین پیش کرنے کے لئے اس کے گائے ہوئے ایک ہزار سے زائد گیتوں کا پہلا اردو ڈیٹابیس بنایا گیا ہے جس میں ریکارڈ محفوظ رکھنے کے علاوہ دیگر ساتھی فنکاروں پر تفصیلی مضامین بھی شائع کئے جارہے ہیں۔