PAK Magazine | An Urdu website on the Pakistan history
Thursday, 13 June 2024, Day: 165, Week: 24

PAK Magazine |  پاک میگزین پر تاریخِ پاکستان ، ایک منفرد انداز میں


پاک میگزین پر تاریخِ پاکستان

Annual
Monthly
Weekly
Daily
Alphabetically

سوموار 14 اگست 2023

آئینی ترامیم

 ترامیم
50 برسوں میں
26 آئینی ترامیم ہوئیں

کسی بھی ملک کے آئین یا دستور میں نظامِ حکومت چلانے کے لیے حقوق و اختیارات ، قواعدوضوابط اور حدودوقیود کو ایک باہمی تحریری معاہدے کی شکل دی جاتی ہے جس پر عوام الناس کی طرف سے منتخب نمائندے متفق ہوکر کاروبارِ مملکت چلاتے ہیں۔

پاکستان میں مقتدر حلقوں کا بنایا ہوا پہلا آئین عرصہ نو سال بعد 23 مارچ 1956ء کو نافذ ہوا جس کی یاد میں چند سال تک "یومِ جمہوریہ" منایا گیا جو آئین شکن آمرانہ نظام میں "یومِ پاکستان" بنا دیا گیا۔ اس دوران 1962ء میں ایک آمرانہ "صدارتی دستور ، بے نور" بھی آیا لیکن جس طرح سے آیا تھا، اسی طرح سے غائب بھی ہو گیا تھا۔

پاکستان کا مستقل آئین

پاکستان کے عوام کے منتخب نمائندوں کا پہلا متفقہ آئین 10 اپریل 1973ء کو منظور ہوا اور 14 اگست 1973ء کو نافذ ہوا۔ گزشتہ پچاس برسوں میں اس آئین کو جہاں دو آمروں نے پامال کیا، وہاں اس میں مروجہ جمہوری طور طریقوں سے دو درجن سے زائد ترامیم بھی ہوئیں جن میں پہلی سات ترامیم، آئینِ پاکستان کے خالق، "بابائے آئین" یا "قائدِدستور" اور "قائدِ عوام" جناب ذوالفقار علی بھٹوؒ کے دورِ حکومت میں ہوئیں۔ صدر فضل الہٰی چوہدری تھے۔

پیپلز پارٹی کی آئینی ترامیم

پاکستان پیپلز پارٹی، اب تک چار مرتبہ برسرِاقتدار آئی اور کل ملا کر سوا پندرہ سال تک حکومت کی جو اب تک کسی بھی سیاسی جماعت کا سب سے طویل جمہوری دور رہا ہے۔ اس دوران اس جماعت کے چار وزرائے اعظم رہے۔

اپنے پہلے دورِ حکومت (1971/77) میں وزیرِاعظم جناب ذوالفقار علی بھٹوؒ کی قیادت میں سات آئینی ترامیم کے بعد دوسرے اور تیسرے ادوارِ حکومت (1988/90) اور (1993/96) میں محترمہ بے نظیر بھٹو کی قیادت میں کوئی آئینی ترمیم نہ کر سکی البتہ اپنے چوتھے اور اب تک کے آخری دورِ حکومت (2008/13) میں وزیراعظم یوسف رضا گیلانی کی قیادت میں مزید تین آئینی ترامیم کیں۔ اس طرح سے اس پارٹی نے کل دس مرتبہ آئینی ترامیم کی ہیں۔

نون لیگ کی آئینی ترامیم

پاکستان مسلم لیگ نون، اب اپنے پانچویں دورِ حکومت میں ہے۔ اس سے قبل اس جماعت نے کل ملا کر تقریباً تیرہ سال حکومت کی۔ اس جماعت کے تین وزرائے اعظم رہے۔

اپنے پہلے دورِ حکومت (1990/93) میں وزیرِاعظم میاں محمد نواز شریف کی قیادت میں دو ، دوسرے دورِ حکومت (1996/99) میں بھی انھی کی قیادت میں چار اور تیسرے دورِ حکومت میں بھی میاں صاحب ہی کی قیادت میں مزید چار آئینی ترامیم کیں۔ متبادل وزیرِاعظم شاہد خاقان عباسی نے بھی ایک آئینی تبدیلی کی اور اس طرح سے نون لیگ نے کل گیارہ آئینی ترامیم کیں جو سب سے زیادہ ہیں۔

تحریکِ انصاف کی آئینی ترمیم

پاکستان تحریکِ انصاف نے (2018/22) تک حکومت کی اور وزیرِاعظم عمران خان کی قیادت میں ایک آئینی ترمیم کی۔

آمروں کی ترامیم

1973ء کے آئین کے بعد اب تک سب سے زیادہ یعنی بیس سال تک دو آمروں نے حکومت کی اور انھوں نے آئین کو اپنی مرضی سے استعمال کیا۔ جنرل ضیاع مردود (1977/88) نے مسلسل گیارہ سال تک ناجائز حکومت کی۔ پیپلز پارٹی کے خوف سے غیرجماعتی انتخابات کروائے اور ان کے نتیجے میں برآمد ہونے والی اسمبلی میں مسلم لیگ کو حیاتِ نو بخشی۔ پہلا قرعہ فال، محمد خان جونیجو کے نام نکلا جن سے بدنامِ زمانہ آٹھویں ترمیم کے علاوہ مزید دو آئینی ترامیم کروائیں۔

جنرل مشرف غدار (1999/2008) نے بھی مسلسل نو سال تک زبردستی حکومت کی۔ عدالتِ عالیہ نے اسے آئین میں من مانی ترامیم کا اختیار بھی دیا تھا۔ اس نے 17ویں ترمیم کروا کر جنرل ضیاع مردود کی 8ویں ترمیم کو بحال کیا۔ ان نو برسوں میں تین وزرائے اعظم تھے۔ یہ واحد ترمیم ظفراللہ جمالی کی وزارتِ عظمیٰ کے دور میں ہوئی تھی۔

آئینِ پاکستان میں گزشتہ نصف صدی میں 26 ترامیم ہو چکی ہیں جن پر مختصراً معلومات مندرجہ ذیل ہیں:






Pakistan Constitution Amendments

Monday, 14 August 2023

26 amendments were passed since 1973..




پاکستان کی تاریخ پر ایک منفرد ویب سائٹ

پاک میگزین ، پاکستان کی سیاسی تاریخ پر ایک منفرد ویب سائٹ ہے جس پر سال بسال اہم ترین تاریخی واقعات کے علاوہ اہم شخصیات پر تاریخی اور مستند معلومات پر مبنی مخصوص صفحات بھی ترتیب دیے گئے ہیں جہاں تحریروتصویر ، گرافک ، نقشہ جات ، ویڈیو ، اعدادوشمار اور دیگر متعلقہ مواد کی صورت میں حقائق کو محفوظ کرنے کی کوشش کی جارہی ہے۔

2017ء میں شروع ہونے والا یہ عظیم الشان سلسلہ، اپنی تکمیل تک جاری و ساری رہے گا، ان شاءاللہ



پاکستان کے اہم تاریخی موضوعات



تاریخِ پاکستان کی اہم ترین شخصیات



تاریخِ پاکستان کے اہم ترین سنگِ میل



پاکستان کی اہم معلومات

Pakistan

چند مفید بیرونی لنکس



پاکستان فلم میگزین

پاک میگزین" کے سب ڈومین کے طور پر "پاکستان فلم میگزین"، پاکستانی فلمی تاریخ، فلموں، فنکاروں اور فلمی گیتوں پر انٹرنیٹ کی تاریخ کی پہلی اور سب سے بڑی ویب سائٹ ہے جو 3 مئی 2000ء سے مسلسل اپ ڈیٹ ہورہی ہے۔


پاکستانی فلموں کے 75 سال …… فلمی ٹائم لائن …… اداکاروں کی ٹائم لائن …… گیتوں کی ٹائم لائن …… پاکستان کی پہلی فلم تیری یاد …… پاکستان کی پہلی پنجابی فلم پھیرے …… پاکستان کی فلمی زبانیں …… تاریخی فلمیں …… لوک فلمیں …… عید کی فلمیں …… جوبلی فلمیں …… پاکستان کے فلم سٹوڈیوز …… سینما گھر …… فلمی ایوارڈز …… بھٹو اور پاکستانی فلمیں …… لاہور کی فلمی تاریخ …… پنجابی فلموں کی تاریخ …… برصغیر کی پہلی پنجابی فلم …… فنکاروں کی تقسیم ……

پاک میگزین کی پرانی ویب سائٹس

"پاک میگزین" پر گزشتہ پچیس برسوں میں مختلف موضوعات پر مستقل اہمیت کی حامل متعدد معلوماتی ویب سائٹس بنائی گئیں جو موبائل سکرین پر پڑھنا مشکل ہے لیکن انھیں موبائل ورژن پر منتقل کرنا بھی آسان نہیں، اس لیے انھیں ڈیسک ٹاپ ورژن کی صورت ہی میں محفوظ کیا گیا ہے۔

پاک میگزین کا تعارف

"پاک میگزین" کا آغاز 1999ء میں ہوا جس کا بنیادی مقصد پاکستان کے بارے میں اہم معلومات اور تاریخی حقائق کو آن لائن محفوظ کرنا ہے۔

Old site mazhar.dk

یہ تاریخ ساز ویب سائٹ، ایک انفرادی کاوش ہے جو 2002ء سے mazhar.dk کی صورت میں مختلف موضوعات پر معلومات کا ایک گلدستہ ثابت ہوئی تھی۔

اس دوران، 2011ء میں میڈیا کے لیے akhbarat.com اور 2016ء میں فلم کے لیے pakfilms.net کی الگ الگ ویب سائٹس بھی بنائی گئیں لیکن 23 مارچ 2017ء کو انھیں موجودہ اور مستقل ڈومین pakmag.net میں ضم کیا گیا جس نے "پاک میگزین" کی شکل اختیار کر لی تھی۔

سالِ رواں یعنی 2024ء کا سال، "پاک میگزین" کی مسلسل آن لائن اشاعت کا 25واں سلور جوبلی سال ہے۔




PAK Magazine is an individual effort to compile and preserve the Pakistan history online.
All external links on this site are only for the informational and educational purposes and therefor, I am not responsible for the content of any external site.