PAK Magazine
Sunday, 03 July 2022, Week: 26

Pakistan Chronological History
Annual
Annual
Monthly
Monthly
Weekly
Weekly
Daily
Daily
Alphabetically
Alphabetically


2010

18th Constitution amendment

Thursday, 8 April 2010

Pakistan adopts the 18th amendment to the Constitution, stripping Presidents powers..

18ویں آئینی ترمیم

جمعرات 8 اپریل 2010
18ویں آئینی ترمیم

8 اپریل 2010ء کو پاکستان کی قومی اسمبلی نے 18ویں آئینی ترمیم منظور کی جس سے صدر کو اپنی صوابدید پر کسی منتخب وزیراعظم یا حکومت کو برخاست کرنے کا ناجائز حق ختم کر دیا گیا تھا۔۔!

اختیارات کی جنگ

پاکستان میں اختیارات کی جنگ روز اول سے جاری ہے۔ قائداعظمؒ کے پاس گورنر جنرل کے کلی اختیارات تھے جو برطانوی پارلیمنٹ نے تفویض کیے تھے۔ وزیراعظم لیاقت علی خان اور آرمی چیف جنرل گریسی سے کشمیر کے موضوع پر ان کے اختلافات تاریخ کا ایک حصہ ہیں۔

قائداعظمؒ کے انتقال کے بعد بظاہر خواجہ ناظم الدین کو گورنر جنرل بنایا گیا تھا لیکن اصل اختیارات وزیراعظم نوابزادہ لیاقت علی کے پاس چلے گئے تھے جو پاکستان کی تاریخ کے سب سے بااختیار وزیراعظم تھے لیکن انتہائی نااہل شخص تھے۔ انھوں نے اپنے دور اقتدار میں آئین سازی میں مجرمانہ غفلت کا مظاہرہ کیا جس کی سزا پاکستانی قوم آج تک بھگت رہی ہے۔

طاقت کا سرچشمہ کون؟

وزیراعظم لیاقت علی خان کے قتل کے بعد اختیارات سول اور ملٹری بیوروکریسی کے ہاتھوں میں چلے گئے تھے۔ اگلے سات برسوں میں سات ہی وزرائے اعظم بدلے گئے جن میں بیشتر گورنرجنرل کے اشارے پر برطرف ہوئے۔ ملک غلام محمد اور سکندرمرزا ، بیوروکریسی کے بڑے نام تھے جنھیں بندوق بردار آرمی چیف جنرل ایوب خان کے آگے ہتھیار ڈالنا پڑے۔ گو اس دوران صرف بھٹو صاحب کے دور حکومت میں وقتی طور پر یہ تاثر غائب ہوا تھا لیکن حقیقت میں تب سے اب تک پاکستان میں طاقت کا سرچشمہ آرمی چیف ہی رہے ہیں۔

آمروں کا آئیڈیل وزیراعظم

جنرل ضیاع مردود نے جب 5 جولائی 1977ء کو پاکستان پر قبضہ کیا تو اختیارات کی اس جنگ میں اپنا مقصد ان الفاظ میں بیان کیا کہ "میں ایسا وزیر اعظم چاہتا ہوں جو میرے چھڑی ہلانے سے لائن حاضر ہو جائے۔۔" اس ملعون نے آٹھ سال بعد مارشل لاء اٹھانے سے قبل 5 جولائی 1977ء سے اپنے ناجائز دور اقتدار کو قانونی جواز فراہم کرنے کے لیے 1973ء کے معطل شدہ آئین کی بحالی کے لیے 9 نومبر 1985ء کو بدنام زمانہ 8ویں ترمیم منظور کروائی تھی۔ یہ ترمیم ایک ایسی اسمبلی سے منظور کروائی گئی تھی جس کے اراکین غیرجماعتی انتخابات کے نتیجے میں اپنی ذاتی حیثیتوں میں منتخب ہوکر آئے تھے۔ انھیں مبینہ طور پر فی کس ایک لاکھ دس ہزار روپے کی رشوت دی گئی تھی جس سے 8ویں ترمیم کے حق میں وؤٹ ڈلوائے گئے تھے۔

ستم ظریفی دیکھئے کہ جس اسمبلی نے جنرل ضیاع مردود کو یہ ناجائز اختیار دیا تھا ، وہ خود ہی اس کا شکار بنی اور 29 مئی 1988ء کو کرپشن کے الزامات لگا کر برطرف کردی گئی تھی۔ سپریم کورٹ نے آمر مردود کے اس فیصلے کو غلط قرار دیا تھا لیکن تب تک وہ غاصب و جابر جہنم واصل ہو کر تاریخ کے گٹر میں گم ہوچکا تھا۔

بے ضمیری

جنرل ضیاع کی باقیات نے یہ کھیل جاری رکھا اور 6 اگست 1990ء کو صدر غلام اسحاق خان نے وزیراعظم بے نظیر بھٹو کی حکومت برطرف کر دی تھی۔ سپریم کورٹ نے اس فیصلے کو درست قرار دیا تھا لیکن جب 18 اگست 1993ء کو صدر غلام اسحاق خان نے ایک بار پھر یہ اختیار استعمال کرتے ہوئے نواز شریف حکومت کو برطرف کیا تو سپریم کورٹ نے نہ صرف فیصلہ غیر آئینی قرار دیا بلکہ حکومت بھی بحال کر دی تھی۔ ایک جج ، جسٹس سجاد علی شاہ نے اختلافی نوٹ لکھا تھا کہ ایک سندھی وزیر اعظم کو ریلیف نہیں ملا لیکن پنجابی وزیر اعظم کو ریلیف دیا جا ریا ہے۔ مزے کی بات ہے کہ جب 5 نومبر 1996ء کو صدر فاروق لغاری نے بے نظیر بھٹو کی حکومت کو برطرف کیا تو انھی جسٹس سجاد علی شاہ صاحب نے اس فیصلے کو آئینی تحفظ فراہم کیا تھا۔

جس کی لاٹھی ، اس کی بھینس

اپریل 1997ء میں 13ویں آئینی ترمیم کے ذریعے صدر کے صوابدیدی اختیار کو ختم کر دیا گیا تھا۔ اس وقت وزیراعظم میاں محمد نواز شریف تھے جن کے پاس دوتہائی اکثریت تھی لیکن پھر بھی وہ اپنا اقتدار نہ بچا سکے تھے اور 12 اکتوبر 1999ء کو جنرل مشرف نے ان کا تختہ الٹ دیا تھا۔

پاکستان میں "جس کی لاٹھی ، اس کی بھینس" کی مثال اس وقت صادق ثابت ہوئی جب ایک اور آمر جنرل پرویز مشرف کو سپریم کورٹ کی طرف سے آئین میں تبدیلی کے لامحدود اختیارات دے دیے گئے تھے جن کی آڑ میں 2003ء میں ایک بار پھر 17ویں ترمیم میں 8ویں ترمیم کے صدر کے اختیارات کو بحال کر دیا گیا تھا۔ اپریل 2010 میں پیپلز پارٹی کی حکومت میں جب آصف علی زرداری صدر مملکت اور یوسف رضا گیلانی وزیر اعظم تھے تو مفاہمت کی پالیسی کے تحت پارلیمنٹ نے آئین میں 18ویں ترمیم کے ذریعے وزیر اعظم کے 1973ء کے آئین میں حاصل اختیارات بحال کر دیے گئے اور 58(2) بی سمیت آئینِ پاکستان سے دیگر آمرانہ غلاظتوں کو پاک و صاف کردیا گیا تھا۔












World history
Latest News on PAK Magazine
Pakistan Media

PAK Magazine presents latest news from newspapers, TV, social media, political parties, official's and many renowned journalists from Pakistan and around the world.


تاریخ پاکستان

پاک میگزین ، پاکستانی تاریخ پر اردو میں ایک منفرد ویب سائٹ ہے جس پر اہم تاریخی واقعات کو بتاریخ سالانہ ، ماہانہ ، ہفتہ وارانہ ، روزانہ اور حروفانہ ترتیب سے چند کلکس کے نیچے پیش کیا گیا ہے۔ علاوہ ازیں اہم ترین واقعات اور شخصیات پر تاریخی اور مستند معلومات پر مخصوص صفحات ترتیب دیے گئے ہیں جہاں تصویر و تحریر ، ویڈیو اور دیگر متعلقہ مواد کی صورت میں محفوظ کیا گیا ہے۔ یہ سلسلہ ایک انفرادی کاوش اور فارغ اوقات کا بہترین مشغلہ ہے جو اپنی تکمیل تک جاری و ساری رہے گا ، ان شاء اللہ۔۔!



1988
غلام اسحاق خان ، صدر بنے
غلام اسحاق خان ، صدر بنے
1929
قائد اعظمؒ کے چودہ نکات
قائد اعظمؒ کے چودہ نکات
2010
18ویں آئینی ترمیم
18ویں آئینی ترمیم
2020
روشن ڈیجیٹل اکاؤنٹ
روشن ڈیجیٹل اکاؤنٹ
1947
لیاقت علی خان ، وزیر اعظم بنے
لیاقت علی خان ، وزیر اعظم بنے


تاریخ پاکستان ، اہم موضوعات

تحریک پاکستان
تحریک پاکستان
جغرافیائی تاریخ
جغرافیائی تاریخ
سقوط ڈھاکہ
سقوط ڈھاکہ
شہ سرخیاں
شہ سرخیاں
سیاسی ڈائری
سیاسی ڈائری
قائد اعظمؒ
قائد اعظمؒ
ذوالفقار علی بھٹوؒ
ذوالفقار علی بھٹوؒ
بے نظیر بھٹو
بے نظیر بھٹو
نواز شریف
نواز شریف
عمران خان
عمران خان
سکندرمرزا
سکندرمرزا
جنرل ایوب
جنرل ایوب
جنرل یحییٰ
جنرل یحییٰ
جنرل ضیاع
جنرل ضیاع
جنرل مشرف
جنرل مشرف
صدر
صدر
وزیر اعظم
وزیر اعظم
آرمی چیف
آرمی چیف
چیف جسٹس
چیف جسٹس
انتخابات
انتخابات
امریکی امداد
امریکی امداد
مغلیہ سلطنت
مغلیہ سلطنت
ڈنمارک
ڈنمارک
اٹلی کا سفر
اٹلی کا سفر
حج بیت اللہ
حج بیت اللہ
سیف الملوک
سیف الملوک
شعر و شاعری
شعر و شاعری
ہیلتھ میگزین
ہیلتھ میگزین
فلم میگزین
فلم میگزین
میڈیا لنکس
میڈیا لنکس

پاکستان کے بارے میں اہم معلومات

Pakistan

چند اہم بیرونی لنکس


Pakistan Exchange Rates

Pakistan Rupee Exchange Rate



PAK Magazine is an individual effort to compile and preserve the Pakistan's political, film and media history.
All external links on this site are only for the informational and educational purposes, and therefor, I am not responsible for the content of any external site.