PAK Magazine
Monday, 27 June 2022, Week: 26

Pakistan Chronological History
Annual
Annual
Monthly
Monthly
Weekly
Weekly
Daily
Daily
Alphabetically
Alphabetically


1973

Zulfikar Ali Bhutto

Tuesday, 14 August 1973

Zulfikar Ali Bhutto was first elected Prime Minister in Pakistan's history..

بھٹو ، وزیراعظم بنے

منگل 14 اگست 1973

ذوالفقار علی بھٹوؒ ، نے 14 اگست 1973ء کو وزیراعظم کے عہدے کا حلف اٹھایا تھا۔۔!

پہلا منتخب وزیراعظم

اسی دن پاکستان کا مستقل اور متفقہ آئین بھی نافذ ہوا جس کے تحت پارلیمانی جمہوریت کا انتخاب کیا گیا۔ دو دن قبل ، پاکستان کی پہلی منتخب قومی اسمبلی کے ارکان نے بھٹو صاحب کو اپنا قائد ایوان منتخب کیا جنھوں نے اپنے حریف مولانا شاہ احمد نورانی کے 28 وؤٹوں کے مقابلے میں 108 وؤٹ حاصل کیے۔ اس طرح بھٹو صاحب ، پاکستان کی تاریخ میں عوام کے وؤٹوں سے منتخب ہونے والے پہلے جبکہ کل 9ویں وزیراعظم تھے۔

آئین کا بانی

ذوالفقارعلی بھٹوؒ ، اس سے قبل 20 دسمبر 1971ء سے پاکستان کے صدر اور چیف مارشل لاء ایڈمنسٹریٹر کے عہدے پر فائز تھے۔ سقوط ڈھاکہ کے بعد جب قوم کی ناؤ ڈبونے کے بعد جنرل یحییٰ خان نے اپنے غاصب اور نااہل ٹولے سمیت بھاگنے ہی میں عافیت سمجھی تو تمام اختیارات بھٹو صاحب کے حوالے کر گئے تھے۔ اس طرح سے وہ تاریخ کے اکلوتے "سول مارشل لاء ناظم اعلیٰ" مقرر ہوئے۔ مارشل لاء کی لعنت کو انھوں نے 21 اپریل 1972ء کو ختم کر کے ملک کو ایک عبوری آئین دیا جس میں وہ صدر کے عہدے پر فائز تھے۔ صرف 20 ماہ میں پاکستان جیسی ایک منتشر قوم کو ایک مستقل اور متفقہ آئین دینا بھی بھٹو صاحب کا بہت بڑا کارنامہ تھا۔

مضبوط معیشت

ایک تباہ حال اور شکست خوردہ پاکستان کی بھاگ ڈور سنبھالنے کے علاوہ اگست 1973ء میں پنجاب اور سندھ میں خوفناک سیلاب کے بعد اسی سال کے آخر میں تیل کا ایک سنگین عالمی بحران پیدا ہوا تھا جس میں تاریخ میں پہلی بار قیمتیں عالمی مارکیٹ میں دگنی ہوگئی تھیں۔ اس کے باوجود بھٹو صاحب کی مضبوط معاشی پالیسیوں کی وجہ سے پاکستان کی جی ڈی پی اپنے روایتی حریف بھارت سے بدرجہا بہتر رہی۔

بھٹو صاحب کے وزارت عظمیٰ کے دور کے چند بڑے بڑے کارناموں میں سے کچھ مندرجہ ذیل ہیں:

  • جنگی قیدیوں کی واپسی

    28 اگست 1973ء کو "معاہدہ دہلی" ہوا جس سے بھارت کی قید میں پاکستان کے 93 ہزار جنگی قیدیوں کی رہائی عمل میں آئی اور بنگلہ دیش نے 195 فوجی افسران کے خلاف جنگی جرائم کے تحت مقدمہ نہ چلانے کی حامی بھر لی۔ 28 ستمبر 1973ء کو پہلا جنگی قیدی واپس آیا جبکہ آخری قیدی جنرل نیازی ، 30 اپریل 1974ء کو وارد ہوا تھا۔

    22 جولائی 1976ء کو پاک بھارت تعلقات کی تجدید ہوئی اور لاہور اور امرتسر کے درمیان "سمجھوتہ ایکسپریس" ٹرین کا افتتاح ہوا تھا۔

  • بڑے ترقیاتی منصوبے

    30 دسمبر 1973ء کو سٹیل ملز کے منصوبے کو عملی جامہ پہنایا گیا جو روس کے تعاون سے قائم کیا گیا تھا۔ اسی سلسلے میں 5 اگست 1976ء کو پاکستان کی دوسری بندرگاہ "پورٹ قاسم" کا سنگ بنیاد بھی رکھا تھا۔ بھٹو ہی کے دور میں 1974ء میں تربیلا ڈیم کی تکمیل ہوئی تھی۔

    23 فروری 1977ء کو ٹیکسلا میں چین کی مدد سے بھاری مشینوں کی تیاری کا افتتاح بھی بھٹو صاحب نے کیا تھا۔

    یکم جنوری 1974ء کو بینک اور دیگر مالیاتی ادارے بھی قومی تحویل میں لے لیے گئے جبکہ زرعی اور پولیس اصلاحات بھی کی گئی تھیں۔

  • بھٹو ، ایک عالمی لیڈر

  • 22 فروری 1974ء کو لاہور میں دوسری اسلامی سربراہی کانفرنس ہوئی تھی جس نے عالم اسلام کو ایک عالمی سیاسی طاقت بنا دیا اور جس کے لیڈر ذوالفقار علی بھٹوؒ تھے۔ یاد رہے کہ اسی سال قومی اسمبلی میں دو ماہ کے بحث و مباحثہ کے بعد متفقہ طور پر 7 ستمبر کو قادیانیوں کو غیرمسلم اقلیت قرار بھی دیا گیا تھا اور 3 مارچ 1976ء کو راولپنڈی میں پہلی عالمی سیرت کانفرنس بھی منعقد ہوئی تھی جس کا افتتاح بھی بھٹو صاحب نے کیا تھا۔

    یکم اکتوبر 1976ء کو ترقی پذیر ممالک کے گروپ 77 نے پاکستان کو چیئرمین منتخب کرلیا جو بھٹو کی ایک اور گستاخی تھی۔

  • اندرونی استحکام

  • 14 اپریل 1974ء کو بلوچستان میں مسلح بغاوت کا خاتمہ ہوگیا تھا جبکہ 8 اپریل 1976ء کو سرداری نظام بھی ختم کردیا گیا تھا۔ یکم دسمبر 1976ء کو پہلی بار بلوچستان ہائی کورٹ کا قیام عمل میں آیا تھا۔

    10 فروری 1975ء کو نیشنل عوامی پارٹی (نیپ) کو دہشت گردی کے جرم میں پابندی لگا دی گئی تھی جس کی سپریم کورٹ نے توثیق کردی تھی۔ یاد رہے کہ بھٹو صاحب نے 20 دسمبر 1971ء کو حکومت سنبھالتے ہی نیپ پر سے وہ پابندی ہٹا دی تھی جو فوجی آمر جنرل یحییٰ خان نے 25 مارچ 1971ء کو عوامی لیگ اور نیپ پر لگائی تھی۔

  • بھٹو کا اسلامی بم

  • 18 مئی 1974ء کو بھارت کے ایٹمی دھماکے کے بعد اپنے "اسلامی بم" کے منصوبے کے کام کی رفتار کو تیز کرنا بھی تھا۔ اس دوران 1974ء میں ڈاکٹر عبدالقدیر دریافت ہوئے جنھیں 1976ء میں مکمل اختیارات دے کر ایٹم بم بنانے میں پیش رفت ہوئی۔
  • 19 مارچ 1976ء کو فرانس سے ایٹمی ری پراسسینگ پلانٹ کا سمجھوتہ کیا جس سے 4 ہزار میگاواٹ بجلی پیدا ہونا تھی لیکن امریکہ کی رکاوٹ کی وجہ یہ منصوبہ بھٹو کے زوال کے بعد منسوخ ہوگیا تھا۔ اسی دوران 9 اگست 1976ء کو امریکی وزیرخارجہ ہنری کسنجر نے لاہور میں بھٹو کو ایک عبرتناک مثال بنانے کی دھمکی بھی دے دی جس پر جنرل ضیاع مردود جیسے غدار اور آستین کے سانپ نے عملدرآمد کیا تھا۔
  • بھٹو پر قتل کا الزام

    11 نومبر 1974ء کو احمدرضاقصوری کے باپ کا قتل ہوا جس کی ایف آئی آر ، وقت کے وزیراعظم بھٹو کے خلاف کاٹی گئی اور بعد میں انھیں اس ناکردہ جرم میں 4 اپریل 1979ء کو پھانسی بھی دے دی گئی تھی۔ دلچسپ امر یہ ہے کہ احمدرضا قصوری ، اپنی اسمبلی کی رکنیت بچانے کے لیے 6 اپریل 1976ء کو اپنے باپ کے مبینہ قاتل کی سیاسی جماعت ، پیپلز پارٹی میں دوبارہ شامل ہوا اور 8 اپریل 1977ء کو ایک بار پھر نکال باہر کیا گیا تھا۔
  • بھٹو کے خلاف عالمی سازش

    7 مارچ 1977ء کو کسی جمہوری حکومت کے تحت پہلے انتخابات ہوئے جن میں بھٹو صاحب ، دوسری مرتبہ وزیراعظم کے عہدے پر فائز ہوئے۔ ان انتخابات میں دھاندلیوں کی ایک بھرپور تحریک اپنی ناکامی کے بعد "تحریک نظام مصطفیﷺ" بن گئی تھی لیکن بھٹو کی حکمت عملی نے مخالفین کو مذاکرات کی میز پر آنے پر مجبور کردیا تھا۔ پروگرام کے تحت ایک جاہ طلب لعنتی کردار جنرل ضیاع مردود نے آئین و قانون کی دھجیاں بکھیرتے ہوئے بھٹو کا تختہ الٹ دیا تھا اور مسلمانوں میں میرجعفر اور میرصادق کی روایت زندہ رکھی تھی۔

    28 اپریل 1977ء کو بھٹو نے قومی اسمبلی اور سینٹ کے مشترکہ اجلاس میں پونے دو گھنٹے کی تقریر میں نام لیے بغیر انکشاف کیا کہ امریکہ ان کا تختہ الٹوانا چاہتا ہے اور جو تحریک ان کے خلاف چلی ، اس کی پہلے سے منصوبہ بندی ہوچکی تھی۔ اس پر امریکی وزیرخارجہ سائرس وانس نے بھٹو کو ایک احتجاجی خط لکھا تھا جو بھٹو نے 30 اپریل 1977ء کو راولپنڈی میں عوام کے ایک جم غفیر کو دکھا دیا تھا۔

ان کے علاوہ قومی اسمبلی ، سپریم کورٹ اور شاہ فیصل مسجد کی عمارتوں کے علاوہ چترال کی اہم لواری ٹنل کے سنگ بنیاد بھی بھٹو صاحب ہی کے دور میں رکھے گئے تھے۔ قائد اعظمؒ اور علامہ اقبالؒ کے صدسالہ جشن ولادت بھی بڑی دھوم دھام سے منائے گئے تھے۔ اسلام آباد کو اوپن یونیورسٹی کا درجہ ملا جبکہ گومل اور خیرپور یونیورسٹیاں بھی بنائی گئیں۔







Zulfikar Ali Bhutto (video)

Credit: hijazna

صدر ذوالفقار علی بھٹو کا 24 جولائی 1973ء کو دیا گیا ایک انٹرویو جس میں ان سے برطانیہ کے امیگریشن بل کے علاوہ پاکستان کے بھارت کی قید میں جنگی قیدیوں کے بارے میں بھی پوچھا گیا جبکہ یہ بھی ذکر ہوا کہ بھٹو ، انگریزوں سے نفرت کیوں کرتے تھے؟





World history
Latest News on PAK Magazine
Pakistan Media

PAK Magazine presents latest news from newspapers, TV, social media, political parties, official's and many renowned journalists from Pakistan and around the world.


تاریخ پاکستان

پاک میگزین ، پاکستانی تاریخ پر اردو میں ایک منفرد ویب سائٹ ہے جس پر اہم تاریخی واقعات کو بتاریخ سالانہ ، ماہانہ ، ہفتہ وارانہ ، روزانہ اور حروفانہ ترتیب سے چند کلکس کے نیچے پیش کیا گیا ہے۔ علاوہ ازیں اہم ترین واقعات اور شخصیات پر تاریخی اور مستند معلومات پر مخصوص صفحات ترتیب دیے گئے ہیں جہاں تصویر و تحریر ، ویڈیو اور دیگر متعلقہ مواد کی صورت میں محفوظ کیا گیا ہے۔ یہ سلسلہ ایک انفرادی کاوش اور فارغ اوقات کا بہترین مشغلہ ہے جو اپنی تکمیل تک جاری و ساری رہے گا ، ان شاء اللہ۔۔!



1957
 سہروردی برطرف
سہروردی برطرف
1947
قائد اعظمؒ  کی تاریخی تقریر
قائد اعظمؒ کی تاریخی تقریر
1973
تیل کی عالمی قیمتیں
تیل کی عالمی قیمتیں
1951
ملک غلام محمد ، گورنر جنر ل بنے
ملک غلام محمد ، گورنر جنر ل بنے
1958
جنرل ایوب خان ، صدر بن گئے
جنرل ایوب خان ، صدر بن گئے


تاریخ پاکستان ، اہم موضوعات

تحریک پاکستان
تحریک پاکستان
جغرافیائی تاریخ
جغرافیائی تاریخ
سقوط ڈھاکہ
سقوط ڈھاکہ
شہ سرخیاں
شہ سرخیاں
سیاسی ڈائری
سیاسی ڈائری
قائد اعظمؒ
قائد اعظمؒ
ذوالفقار علی بھٹوؒ
ذوالفقار علی بھٹوؒ
بے نظیر بھٹو
بے نظیر بھٹو
نواز شریف
نواز شریف
عمران خان
عمران خان
سکندرمرزا
سکندرمرزا
جنرل ایوب
جنرل ایوب
جنرل یحییٰ
جنرل یحییٰ
جنرل ضیاع
جنرل ضیاع
جنرل مشرف
جنرل مشرف
صدر
صدر
وزیر اعظم
وزیر اعظم
آرمی چیف
آرمی چیف
چیف جسٹس
چیف جسٹس
انتخابات
انتخابات
امریکی امداد
امریکی امداد
مغلیہ سلطنت
مغلیہ سلطنت
ڈنمارک
ڈنمارک
اٹلی کا سفر
اٹلی کا سفر
حج بیت اللہ
حج بیت اللہ
سیف الملوک
سیف الملوک
شعر و شاعری
شعر و شاعری
ہیلتھ میگزین
ہیلتھ میگزین
فلم میگزین
فلم میگزین
میڈیا لنکس
میڈیا لنکس

پاکستان کے بارے میں اہم معلومات

Pakistan

چند اہم بیرونی لنکس


Pakistan Exchange Rates

Pakistan Rupee Exchange Rate



PAK Magazine is an individual effort to compile and preserve the Pakistan's political, film and media history.
All external links on this site are only for the informational and educational purposes, and therefor, I am not responsible for the content of any external site.