PAK Magazine | An Urdu website on the Pakistan history
Thursday, 13 June 2024, Day: 165, Week: 24

PAK Magazine |  پاک میگزین پر تاریخِ پاکستان ، ایک منفرد انداز میں


پاک میگزین پر تاریخِ پاکستان

Annual
Monthly
Weekly
Daily
Alphabetically

بدھ 19 ستمبر 1979

متناسب نمائندگی

متناسب نمائندگی پر انتخابات
متناسب نمائندگی میں
سیاسی جماعتوں کو وؤٹوں کے حساب سے
اسمبلی میں سیٹیں ملتی ہیں

بھٹو سے فراغت کے بعد جنرل ضیاع مردود نے متناسب نمائندگی کا شوشا چھوڑا۔۔!

بھٹو کی پھانسی سے دو ہفتے پہلے، 23 مارچ 1979ء کو پاکستان پر قابض جنرل ضیاع مردود نے دوسری بار عام انتخابات کروانے کا اعلان کیا اور 17 نومبر 1979ء کی تاریخ مقرر کی تھی۔

اس اعلان کے دو ہفتوں کے بعد 4 اپریل 1979ء کو بھٹو کو پھانسی دے دی گئی۔ اسی مہینے یعنی 21 اپریل 1979ء کو جنرل ضیاع کی پہلی "سول کابینہ" کی بھی چھٹی کروا دی گئی جس میں بھٹو مخالف غیر منتخب سیاسی عناصر موجود تھے۔ اصل میں چوردروازے سے وزیر بننے والے ان بے چاروں سے انتخابات کا وعدہ کیا گیا تھا لیکن بھٹو کی پھانسی کی منظوری لے کر جھنڈی کروا دی گئی تھی۔

پیپلز پارٹی اور انتخابات

21 اپریل 1979ء کو جنرل ضیاع ملعون کی دوسری کابینہ نے حلف اٹھائے اور انتخابات کے انعقاد کے عزم کا اظہار کیا۔ بھٹو کی پھانسی کے سانحہ عظیم سے سنبھلنے کے بعد 25 مئی 1979ء کو پیپلز پارٹی نے باضابطہ طور پر بیگم نصرت بھٹو کو چیئرمین منتخب کرلیا اور بے نظیر بھٹو بھی سیاسی طور پر سرگرمِ عمل ہوگئیں جنھوں نے ملک بھر میں پارٹی کو منظم کرتے ہوئے انتخابات میں بھرپور شرکت کا اعلان کردیا جس سے حکومتی ایوانوں میں کھلبلی مچ گئی تھی۔

متناسب نمائندگی پر غور

پیپلز پارٹی کی ثابت قدمی اور اس کا راستہ روکنے کے لیے جنرل ضیاع ملعون نے مختلف چالوں پر غور کرنا شروع کردیا۔ 22 جولائی کو اس نے سیاسی حلقوں سے "متناسب نمائندگی" پر رائے طلب کی۔ جنرل ضیاع کے آئینی امور کے ماہر جسٹس حمودالرحمان نے اس نظام کو موزوں قرار دیا لیکن دیگر سبھی بڑی سیاسی جماعتوں نے مسترد کردیا۔ اس موضوع پر 26 اگست 1979ء کو جنرل ضیاع نے اہم کانفرنس طلب کرلی اور تمام تر مخالفت کے باوجود 13 ستمبر 1979ء کو وفاقی کابینہ نے آئیندہ انتخابات، متناسب نمائندگی پر کروانے کا فیصلہ کر لیا۔

اس دوران سیاسی جماعتوں کی رجسٹریشن اور حساب و کتاب کے قانون کے بعد 17 نومبر 1979ء کے انتخابات کے شیڈول اور حلقہ بندیوں کا اعلان تک کردیا گیا تھا۔

متناسب نمائندگی کیا ہے؟

متناسب نمائندگی کا مطلب یہ ہے کہ کسی بھی سیاسی پارٹی کو پارلیمنٹ میں اتنی ہی سیٹیں ملیں گی جتنے فیصد اس نے وؤٹ حاصل کیے ہیں۔ یعنی اگر ایک پارٹی نے کل ڈالے گئے وؤٹوں کا بیس فیصد حاصل کیا ہے تو اس کو اسمبلی کی کل نشستوں میں سے بیس فیصد نشستیں ہی ملیں گی۔ یہ قانون یہاں ڈنمارک میں گزشتہ سو سال سے جاری ہے۔ اس کا جہاں سب سے بڑا فائدہ عوام میں حقیقی نمائندگی ہوتا ہے وہاں سب سے بڑا نقصان یہ ہے کہ ڈنمارک کی تاریخ میں کبھی کسی پارٹی کو واضح اکثریت حاصل نہیں ہوئی اور ہمیشہ مخلوط حکومتیں ہی بنانا پڑتی ہیں۔

پاکستان میں پیپلز پارٹی کے ناقدین کا یہ موقف رہا ہے کہ اس پارٹی کو تیس فیصد سے زائد وؤٹ نہیں ملتے لیکن دو تہائی اکثریت لے جاتی ہے جو جعلی نمائندگی ہے۔ برطانیہ اور بھارت میں یہی نظام چلتا ہے جہاں ایک حلقہ میں سب سے زیادہ وؤٹ لینے والا ایک امیدوار جیت جاتا ہے چاہے اکثریت نے اس کے مخالف امیدواروں کو زیادہ وؤٹ دیے ہوں۔

19 ستمبر 1979ء کی میری ذاتی ڈائری میں اسوقت کے سیاسی حالات کا ایک خاکہ کھینچا گیا تھا۔ بی بی سی کو ایک انٹرویو میں بے نظیر بھٹو نے جنرل ضیاع کو "بددیانت دلال" کا خطاب دیا تھا۔۔!

19 ستمبر 1979ء کی ذاتی ڈائری کا ایک ورق





Proportional representation

Wednesday, 19 September 1979

Proportional representation means, where electorate are reflected proportionately in the asembly..




پاکستان کی تاریخ پر ایک منفرد ویب سائٹ

پاک میگزین ، پاکستان کی سیاسی تاریخ پر ایک منفرد ویب سائٹ ہے جس پر سال بسال اہم ترین تاریخی واقعات کے علاوہ اہم شخصیات پر تاریخی اور مستند معلومات پر مبنی مخصوص صفحات بھی ترتیب دیے گئے ہیں جہاں تحریروتصویر ، گرافک ، نقشہ جات ، ویڈیو ، اعدادوشمار اور دیگر متعلقہ مواد کی صورت میں حقائق کو محفوظ کرنے کی کوشش کی جارہی ہے۔

2017ء میں شروع ہونے والا یہ عظیم الشان سلسلہ، اپنی تکمیل تک جاری و ساری رہے گا، ان شاءاللہ



پاکستان کے اہم تاریخی موضوعات



تاریخِ پاکستان کی اہم ترین شخصیات



تاریخِ پاکستان کے اہم ترین سنگِ میل



پاکستان کی اہم معلومات

Pakistan

چند مفید بیرونی لنکس



پاکستان فلم میگزین

پاک میگزین" کے سب ڈومین کے طور پر "پاکستان فلم میگزین"، پاکستانی فلمی تاریخ، فلموں، فنکاروں اور فلمی گیتوں پر انٹرنیٹ کی تاریخ کی پہلی اور سب سے بڑی ویب سائٹ ہے جو 3 مئی 2000ء سے مسلسل اپ ڈیٹ ہورہی ہے۔


پاکستانی فلموں کے 75 سال …… فلمی ٹائم لائن …… اداکاروں کی ٹائم لائن …… گیتوں کی ٹائم لائن …… پاکستان کی پہلی فلم تیری یاد …… پاکستان کی پہلی پنجابی فلم پھیرے …… پاکستان کی فلمی زبانیں …… تاریخی فلمیں …… لوک فلمیں …… عید کی فلمیں …… جوبلی فلمیں …… پاکستان کے فلم سٹوڈیوز …… سینما گھر …… فلمی ایوارڈز …… بھٹو اور پاکستانی فلمیں …… لاہور کی فلمی تاریخ …… پنجابی فلموں کی تاریخ …… برصغیر کی پہلی پنجابی فلم …… فنکاروں کی تقسیم ……

پاک میگزین کی پرانی ویب سائٹس

"پاک میگزین" پر گزشتہ پچیس برسوں میں مختلف موضوعات پر مستقل اہمیت کی حامل متعدد معلوماتی ویب سائٹس بنائی گئیں جو موبائل سکرین پر پڑھنا مشکل ہے لیکن انھیں موبائل ورژن پر منتقل کرنا بھی آسان نہیں، اس لیے انھیں ڈیسک ٹاپ ورژن کی صورت ہی میں محفوظ کیا گیا ہے۔

پاک میگزین کا تعارف

"پاک میگزین" کا آغاز 1999ء میں ہوا جس کا بنیادی مقصد پاکستان کے بارے میں اہم معلومات اور تاریخی حقائق کو آن لائن محفوظ کرنا ہے۔

Old site mazhar.dk

یہ تاریخ ساز ویب سائٹ، ایک انفرادی کاوش ہے جو 2002ء سے mazhar.dk کی صورت میں مختلف موضوعات پر معلومات کا ایک گلدستہ ثابت ہوئی تھی۔

اس دوران، 2011ء میں میڈیا کے لیے akhbarat.com اور 2016ء میں فلم کے لیے pakfilms.net کی الگ الگ ویب سائٹس بھی بنائی گئیں لیکن 23 مارچ 2017ء کو انھیں موجودہ اور مستقل ڈومین pakmag.net میں ضم کیا گیا جس نے "پاک میگزین" کی شکل اختیار کر لی تھی۔

سالِ رواں یعنی 2024ء کا سال، "پاک میگزین" کی مسلسل آن لائن اشاعت کا 25واں سلور جوبلی سال ہے۔




PAK Magazine is an individual effort to compile and preserve the Pakistan history online.
All external links on this site are only for the informational and educational purposes and therefor, I am not responsible for the content of any external site.