PAK Magazine
Monday, 17 January 2022, Week: 03

Pakistan Chronological History

سالانہ | ماہانہ | ہفتہ وارانہ | روزانہ | حروفانہ | اہم ترین | تحریک پاکستان | ذاتی ڈائریاں

Pakistan Chronological History
1974

Bhutto in Bangladesh

Thursday, 27 June 1974

Prime Minister of Paksitan, Zulfikar Ali Bhutto visited Bangladesh on June 27, 1974..


بھٹو اور مجیب

جمعرات 27 جون 1974
Mujeeb-ur-Rehman & Zulfikar Ali Bhutto

1971ء کے سیاسی بحران میں معاملات اگر بھٹو اور مجیب کے مابین ہوتے تو حل بھی ہوجاتے لیکن فساد کی اصل جڑ جنرل یحییٰ خان تھا جو جانے کے لیے نہیں آیا تھا۔۔!

پروپیگنڈہ یہ کیا گیا کہ بھٹو نے مجیب کی اکثریت کو تسلیم نہیں کیا جس کی وجہ سے پاکستان ٹوٹ گیا تھا۔ ایسے لوگ جو اپنے دماغ سے سوچنے کی صلاحیت نہیں رکھتے ، اس بکواس پر یقین رکھتے ہیں حالانکہ کوئی ایک بھی تاریخی حوالہ نہیں دیا جا سکتا جس میں یہ ثابت کیا جا سکے کہ بھٹو نے مجیب کی اکثریت کو کبھی چیلنج کیا تھا۔۔!

بھٹو اور مجیب کے اختلافات کیا تھے؟

بھٹو اور مجیب کے درمیان اختلاف صرف آئین سازی پر تھے۔ مجیب اپنی مرضی کا آئین بنانا چاہتا تھا جبکہ بھٹو سبھی صوبوں کے لیے قابل قبول دستور کی بات کر رہا تھا۔ دوسری طرف پاکستان پر مسلط غاصب اور جابر حکمران جنرل یحییٰ خان ، اپنی مرضی کا آئین بنوانا چاہتا تھا جس میں اسے اگلے پانچ سال کے لیے صدر منتخب کیا جائے۔ اکثریتی پارٹی کا لیڈر مجیب الرحمان ، یہ غنڈہ گردی اور بدمعاشی قبول کرنے کو تیار نہیں تھا جس کی وجہ سے غدار قرار پایا ، سب سے بڑی پارٹی کو خلاف قانون قرار دیا گیا اور طے شدہ منصوبے کے تحت بنگالیوں کی نسل کشی کی گئی جس کا نتیجہ سقوط مشرقی پاکستان کی صورت میں سامنے آیا تھا۔

1970ء کے انتخابات کے نتائج

1970ء کے پہلے عام انتخابات میں مقابلہ بائیں بازو کی سوشلسٹ جماعتوں (یعنی عوامی لیگ ، پیپلز پارٹی ، نیشنل عوامی پارٹی اور قیوم لیگ) اور دائیں بازو کی مذہبی اور نظریاتی جماعتوں (یعنی جماعت اسلامی ، جمیعت علمائے اسلام ، جمیعت علمائے پاکستان ، کونسل مسلم لیگ ، کنونشن مسلم لیگ اور پاکستان ڈیموکریٹک پارٹی) کے درمیان ہوا تھا۔ ان انتخابات میں 60 فیصد وؤٹ سوشلسٹ جماعتوں کو ملے تھے۔

بدقسمتی سے پہلے چوبیس برسوں میں پاکستان میں جو حالات پیدا کیے گئے تھے ، ان کی وجہ سے کوئی بھی سیاسی جماعت ملک گیر مقبولیت نہیں رکھتی تھی۔ عوامی لیگ ، صرف مشرقی پاکستان تک محدود تھی لیکن 55 فیصد آبادی کی وجہ سے اس کی سیٹیں دیگر چاروں صوبوں کی مجموعی سیٹوں سے بھی زیادہ تھیں۔ پیپلز پارٹی کو پنجاب اور سندھ میں برتری حاصل ہوئی تھی جبکہ صوبہ خیبرپختونخواہ اور بلوچستان میں نیشنل عوامی پارٹی کو اکثریت ملی تھی۔ ایسے میں عوامی لیگ اکیلے حکومت بنانے کی پوزیشن میں تھی اور اگر روایتی جمہوری ماحول ہوتا تو ان تینوں ہم خیال پارٹیوں کی مخلوط حکومت بنتی لیکن مسلسل محرومیوں اور ناانصافیوں نے اکثریتی آبادی بنگالیوں کو پاکستان سے اتنا متنفر کردیا تھا کہ وہ علیحدگی اور خودمختاری کے سوا کسی حل پر راضی نہیں تھے۔

اگر بھٹو کے پاس اختیارات ہوتے۔۔!

اس وقت معاملات اگر بھٹو جیسے زیرک سیاستدان کے ہاتھوں میں ہوتے تو سانحہ مشرقی پاکستان کبھی نہ ہوتا۔ جو بھٹو ، اندرا گاندھی جیسی مہان سیاستدان کو ناک چنے چبوا سکتا تھا ، اس کے لیے مجیب کس باغ کی مولی تھا۔ بھٹو کی عظمت کا اعتراف تو امریکی صدر کینیڈی بھی کرچکے تھے لیکن جب حکمت کی جگہ طاقت لے لے تو پھر وہی کچھ ہوتا ہے جو 1971ء میں ہوا تھا۔




Constitution conflict in 1971
(Daily Mashriq Lahore 1970)


AP Archive





تاریخ پاکستان

پاک میگزین ، پاکستانی تاریخ پر اردو میں ایک منفرد ویب سائٹ ہے جس پر سال بہ سال اہم تاریخی واقعات چند کلکس کے نیچے ہیں۔ ہر واقعہ پر ایک صفحہ ترتیب دیا گیا ہے جہاں تمام تر معلومات کو تصویر و تحریر ، ویڈیو اور دیگر متعلقہ مواد کی صورت میں محفوظ کیا گیا ہے۔ یہ سلسلہ ایک انفرادی کاوش اور فارغ اوقات کا بہترین مشغلہ ہے جو اپنی تکمیل تک جاری و ساری رہے گا ، ان شاء اللہ۔۔!


World history

تاریخ پاکستان

تازہ ترین


پاکستان کے بارے میں اہم معلومات

Pakistan

پاک میگزین کے دیگر سلسلے

جغرافیائی تاریخ
جغرافیائی تاریخ
سقوط ڈھاکہ
سقوط ڈھاکہ
قائد اعظمؒ
قائد اعظمؒ
بھٹو شہیدؒ
بھٹو شہیدؒ
آمر مردود
آمر مردود
صدر
صدر
وزیر اعظم
وزیر اعظم
آرمی چیف
آرمی چیف
چیف جسٹس
چیف جسٹس
مغلیہ سلطنت
مغلیہ سلطنت
ڈنمارک
ڈنمارک
اٹلی کا سفر
اٹلی کا سفر
حج بیت اللہ
حج بیت اللہ
سیف الملوک
سیف الملوک
شعر و شاعری
شعر و شاعری
ہیلتھ میگزین
ہیلتھ میگزین
فلم میگزین
فلم میگزین
میڈیا لنکس
میڈیا لنکس

چند اہم بیرونی لنکس