PAK Magazine | An Urdu website on the Pakistan history
Sunday, 21 July 2024, Day: 203, Week: 29

PAK Magazine |  پاک میگزین پر تاریخِ پاکستان ، ایک منفرد انداز میں


پاک میگزین پر تاریخِ پاکستان

Annual
Monthly
Weekly
Daily
Alphabetically

ہفتہ 5 جون 1993

میجر جنرل محمد اکبر خان

میجر جنرل اکبر خان
میجر جنرل اکبر خان

پاکستان میں "مبینہ طور پر" پہلی فوجی بغاوت کے سرغنہ میجر جنرل محمد اکبر خان تھے۔۔!

محمد اکبر خان ، پاکستان کے سینئر اور قابل ترین فوجی افسر تھے جو پہلے مسلمان آرمی چیف بھی بن سکتے تھے لیکن مبینہ طور پر انھوں نے یہ عہدہ قبول کرنے سے معذرت کر لی تھی۔

میجر جنرل اکبر خان کون تھے؟

1947ء میں پاکستان آرمی میں لیفٹیننٹ کرنل کے عہدے پر فائز تھے۔ 1947/48ء کی جنگِ کشمیر میں بریگیڈیر تھے اور 'جنرل طارق' کے نام سے شہرت حاصل کی۔ انھیں اُس دور میں پاکستان کی فوج کے قابل ترین افسر کی حیثیت حاصل تھی لیکن مارچ 1951ء میں "راولپنڈی سازش کیس" میں ملوث ہونے پر بغاوت کے جرم میں اپنے عہدے سے برطرف کیے گئے اور 12 سالہ قیدہوئی تھی۔

اعلیٰ فوجی اعزاز کے حامل

1912ء میں صوبہ خیبرپختونخواہ میں پشاور کے قریب شہر چارسدہ کے علاقے اُتمان زئی میں پیدا ہوئے۔ 1935ء میں برطانوی فوج میں شمولیت اختیار کی۔ سیلون میں فوجی کارروائیوں میں حصہ لیا۔ دوسری جنگِ عظیم میں برما کے محاذ پر جاپانی حملے میں غیر معمولی شجاعت، حاضر دماغی اور پیشہ ورانہ قیادت کا مظاہرہ کرتے ہوئے اپنی پوری رجمنٹ کو بچانے پر سلطنتِ برطانیہ کا ایک اعلیٰ فوجی اعزاز Distinguished Service Order (DSO) حاصل کیا تھا۔

"راولپنڈی سازش کیس" میں سزا یافتہ ہونے کی وجہ سے 1956ء میں حکومتِ پاکستان کے ایما پر برطانوی حکومت نے یہ اعزاز ضبط کر لیا لیکن 1973ء میں بھٹو دورِ حکومت میں جب جنرل اکبر ، پاکستان کی قومی سلامتی کے مشیر بنے تو برطانوی حکومت نے ان کا یہ اعزاز بحال کردیا تھا۔

راولپنڈی سازش کیس کی حقیقت

جنرل اکبر خان
جنرل اکبر خان ، بھٹو کے مشیر قومی سالمیت اور دفاع

1947/48ء کی "جنگِ کشمیر کے ہیرو" نے 'ریڈرز اِن کشمیر' کے نام سے لکھی گئی اپنی اس کتاب میں "راولپنڈی سازش کیس" کو ایک "کارٹون کہانی" کہہ کر پاکستان کے پہلے آرمی چیف اور پہلے فوجی آمر جنرل ایوب خان کو اس کا 'میرِ رقص' بیان کیا تھا۔

میجر جنرل محمد اکبر خان نے اپنی اس کتاب میں یہ اعتراف بھی کیا تھا کہ وہ ، لیاقت حکومت کی کشمیر اور امریکہ نواز خارجہ پالیسی کے علاوہ انگریز آرمی چیف کی کارکردگی سے انتہائی غیر مطمئن اور زبردست نقاد تھے لیکن کسی قسم کی سیاسی یا مسلح جدوجہد میں شریک نہیں تھے۔ وہ اور ان کی بیگم نجی محفلوں میں اپنے ان خیالات کا برملا اظہار کیا کرتے جو حکومتِ وقت کو ناگوار گزرا اور انھوں نے 23 فروری 1951ء کی ایک نجی محفل میں ہونے والی گفتگو کو بنیاد بناتے ہوئے "راولپنڈی سازش کیس" کا ڈرامہ رچایا تھا۔

جنرل اکبر خان ، پیپلز پارٹی میں

1967ء میں ذوالفقار علی بھٹوؒ ، سیاست میں آئے اور انھوں نے اپنی سیاسی جماعت ، پاکستان پیپلز پارٹی بنائی تو جنرل اکبر خان ، پیپلز پارٹی میں شامل ہوئے۔ بھٹو دورِ حکومت میں "مشیر صدر برائے قومی سالمیت اور دفاع" مقرر ہوئے۔ 5 جون 1993ء کو انتقال ہوا تھا۔

میجر جنرل اکبر خان ، بھٹو کے ساتھ





Major General Akbar Khan

Saturday, 5 June 1993

Major Genral Akbar Khan was convicted in Rawalpindi Conspiracy Case, which was a attempted coup against Liaqat regime in 1951.




پاکستان کی تاریخ پر ایک منفرد ویب سائٹ

پاک میگزین ، پاکستان کی سیاسی تاریخ پر ایک منفرد ویب سائٹ ہے جس پر سال بسال اہم ترین تاریخی واقعات کے علاوہ اہم شخصیات پر تاریخی اور مستند معلومات پر مبنی مخصوص صفحات بھی ترتیب دیے گئے ہیں جہاں تحریروتصویر ، گرافک ، نقشہ جات ، ویڈیو ، اعدادوشمار اور دیگر متعلقہ مواد کی صورت میں حقائق کو محفوظ کرنے کی کوشش کی جارہی ہے۔

2017ء میں شروع ہونے والا یہ عظیم الشان سلسلہ، اپنی تکمیل تک جاری و ساری رہے گا، ان شاءاللہ



پاکستان کے اہم تاریخی موضوعات



تاریخِ پاکستان کی اہم ترین شخصیات



تاریخِ پاکستان کے اہم ترین سنگِ میل



پاکستان کی اہم معلومات

Pakistan

چند مفید بیرونی لنکس



پاکستان فلم میگزین

پاک میگزین" کے سب ڈومین کے طور پر "پاکستان فلم میگزین"، پاکستانی فلمی تاریخ، فلموں، فنکاروں اور فلمی گیتوں پر انٹرنیٹ کی تاریخ کی پہلی اور سب سے بڑی ویب سائٹ ہے جو 3 مئی 2000ء سے مسلسل اپ ڈیٹ ہورہی ہے۔


پاکستانی فلموں کے 75 سال …… فلمی ٹائم لائن …… اداکاروں کی ٹائم لائن …… گیتوں کی ٹائم لائن …… پاکستان کی پہلی فلم تیری یاد …… پاکستان کی پہلی پنجابی فلم پھیرے …… پاکستان کی فلمی زبانیں …… تاریخی فلمیں …… لوک فلمیں …… عید کی فلمیں …… جوبلی فلمیں …… پاکستان کے فلم سٹوڈیوز …… سینما گھر …… فلمی ایوارڈز …… بھٹو اور پاکستانی فلمیں …… لاہور کی فلمی تاریخ …… پنجابی فلموں کی تاریخ …… برصغیر کی پہلی پنجابی فلم …… فنکاروں کی تقسیم ……

پاک میگزین کی پرانی ویب سائٹس

"پاک میگزین" پر گزشتہ پچیس برسوں میں مختلف موضوعات پر مستقل اہمیت کی حامل متعدد معلوماتی ویب سائٹس بنائی گئیں جو موبائل سکرین پر پڑھنا مشکل ہے لیکن انھیں موبائل ورژن پر منتقل کرنا بھی آسان نہیں، اس لیے انھیں ڈیسک ٹاپ ورژن کی صورت ہی میں محفوظ کیا گیا ہے۔

پاک میگزین کا تعارف

"پاک میگزین" کا آغاز 1999ء میں ہوا جس کا بنیادی مقصد پاکستان کے بارے میں اہم معلومات اور تاریخی حقائق کو آن لائن محفوظ کرنا ہے۔

Old site mazhar.dk

یہ تاریخ ساز ویب سائٹ، ایک انفرادی کاوش ہے جو 2002ء سے mazhar.dk کی صورت میں مختلف موضوعات پر معلومات کا ایک گلدستہ ثابت ہوئی تھی۔

اس دوران، 2011ء میں میڈیا کے لیے akhbarat.com اور 2016ء میں فلم کے لیے pakfilms.net کی الگ الگ ویب سائٹس بھی بنائی گئیں لیکن 23 مارچ 2017ء کو انھیں موجودہ اور مستقل ڈومین pakmag.net میں ضم کیا گیا جس نے "پاک میگزین" کی شکل اختیار کر لی تھی۔

سالِ رواں یعنی 2024ء کا سال، "پاک میگزین" کی مسلسل آن لائن اشاعت کا 25واں سلور جوبلی سال ہے۔




PAK Magazine is an individual effort to compile and preserve the Pakistan history online.
All external links on this site are only for the informational and educational purposes and therefor, I am not responsible for the content of any external site.