PAK Magazine | An Urdu website on the Pakistan history
Saturday, 15 June 2024, Day: 167, Week: 24

PAK Magazine |  پاک میگزین پر تاریخِ پاکستان ، ایک منفرد انداز میں


پاک میگزین پر تاریخِ پاکستان

Annual
Monthly
Weekly
Daily
Alphabetically

اتوار 10 جنوری 1977

پاکستان قومی اتحاد

پاکستان قومی اتحاد کا نو ستاروں والا جھنڈا
بھٹو کے خلاف
اپوزیشن اتحاد پی این اے
راتوں رات تشکیل پایا

وزیر اعظم پاکستان ، جناب ذوالفقار علی بھٹوؒ نے 7 جنوری 1977ء کو اچانک ایک سیاسی دھماکہ کرتے ہوئے وقت سے ڈیڑھ سال قبل ہی دو ماہ بعد 7 مارچ 1977ء کو عام انتخابات کا اعلان کر دیا تھا۔۔!

جب بھٹو کے بھی ہوش اڑ گئے تھے۔۔!

اس غیر متوقع اعلان کے صرف تین دن بعد ہی جوابی دھماکہ ہوا جس نے بھٹو کے بھی ہوش اڑا دیئے تھے۔ راتوں رات ، پاکستان کی 9 مختلف الخیال سیاسی اور مذہبی جماعتیں ، ایک بھٹو کے خلاف انتخابی اتحاد میں متحد ہو گئی تھیں۔ کسی کو کوئی شک نہیں تھا کہ پس منظر میں کون تھا۔ تاریخ میں اس اتحاد کو پاکستان قومی اتحاد یا نیشنل الائنس PNA کے نام سے یاد کیا جاتا ہے۔ عوامی زبان میں انھیں "بھان متی کا کنبہ" یا "چوں چوں کا مربہ" بھی کہا گیا تھا۔

لاہور میں رفیق باجوہ نامی سیاستدان کے گھر ہونے والے اس غیرقدرتی سیاسی اتحاد کا سربراہ جمیعت العلمائے اسلام کے سربراہ مولانا مفتی محمود کو بنایا گیا تھا جو مولانا فضل الرحمان کے والد تھے جبکہ نائب صدر نوابزادہ نصراللہ خان تھے جنھیں "بابائے جمہوریت" بھی کہا جاتا تھا۔ رفیق باجوہ جنرل سیکرٹری تھے لیکن کچھ دنوں بعد بھٹو سے مبینہ خفیہ ملاقات کے الزام میں برطرفی کے بعد ان کی جگہ جماعت اسلامی کے پروفیسر غفور احمد کو یہ عہدہ دیا گیا تھا۔

1977ء کے انتخابات اور دھاندلیاں

پاکستان قومی اتحاد کو ہل کا انتخابی نشان ملا تھا اور 1977ء کے انتخابات میں کل 216 میں سے 36 نشستیں حاصل ہوئی تھیں لیکن انھوں نے انتخابات کے نتائج کو تسلیم کرنے سے انکار کردیا تھا۔ ملک بھر میں مبینہ دھاندلیوں اور بے ضابطگیوں کے خلاف بھرپور پرتشدد مظاہرے ہوئے جنھیں عوامی ہمدردی نہ ملنے کے بعد "نظام مصطفیٰﷺ" کی تحریک بنا دیا گیا تھا۔ نوبت یہاں تک پہنچی تھی کہ لاہور میں متعدد ہلاکتیں ہوئیں اور مقامی طور پر مارشل لاء لگانا پڑا۔ چند فوجی افسران کی قوم سے محبت جاگی اور انھوں نے پرتشدد مظاہرین پر گولی چلانے سے انکار کردیا تھا۔ اس "کارنامے" یا حکم عدولی کو بھٹو مخالف لابی بڑے فخر سے بیان کیا کرتی ہے۔ مخالفین کا ایک ہی مطالبہ تھا کہ حکومت مستعفی ہو لیکن بھٹو صاحب کا کمال تھا کہ انھیں وزیراعظم تسلیم نہ کرنے والوں کو مذاکرات کی میز پر آنا پڑا تھا۔

جب جنرل ضیاع نے مذاکرات کو سبوتاژ کیا

انتخابات میں مبینہ دھاندلیوں کے الزامات کے بعد جب مذاکرات ہوئے تو پی این اے کی طرف سے مولانا مفتی محمود ، نوابزادہ نصراللہ خان اور پروفیسر غفور احمد نے نمائندگی کی تھی۔ 5 جولائی 1977ء کو معاہدے پر دستخط ہونا تھے کہ اسی دن آئین کی خلاف ورزی کرتے ہوئے جنرل ضیاع مردود نے مذاکرات کو سبوتاژ کیا اور بھٹو حکومت کا تختہ الٹ دیا تھا۔ ائرمارشل اصغرخان اور بیگم نسیم ولی خان نے مارشل لاء کی راہ ہموار کرنے میں اہم کردار ادا کیا تھا۔

پاکستان قومی اتحاد یا پی این اے کے بعض رہنماؤں نے بھٹو کے زوال کے بعد جنرل ضیاع مردود کی غاصب اور جابر حکومت میں شرکت بھی کی تھی۔ انھیں یہ لالی پاپ دیا گیا تھا کہ ملک میں آزادانہ اور منصفانہ انتخابات کروائے جائیں گے لیکن جنھوں نے 1977ء کے انتخابات میں دھاندلیوں کا یہ سنگین ڈرامہ رچایا تھا ، وہ نوے دن میں الیکشن کروانے تو نہیں آئے تھے۔ آمر مردود کا اپنے حامی سیاستدانوں کے بارے میں یہ جملہ بڑا مشہور ہوا تھا کہ "یہ دم ہلاتے ہوئے میرے پیچھے آئیں گے۔۔"

قدرت کا انتقام یا انصاف دیکھئے کہ بھٹو کے سبھی سیاسی مخالفین ، سیاسی طور پر ناکام و نامراد ہو کر تاریخ کی کتابوں میں گم ہو چکے ہیں لیکن بھٹو زندہ رہا اور ان شاء اللہ ، ہمیشہ رہے گا اور اپنے مخالفین کے سینے پر مونگ دلتا رہے گا۔

پاکستان قومی اتحاد (PNA) میں شامل جماعتیں

  1. جمعیت العلمائے اسلام ..... (سربراہ: مولانا مفتی محمود ، دیوبندی جماعت)
  2. جمعیت العلمائے پاکستان ..... (سربراہ: مولانا شاہ احمد نورانی ، بریلوی جماعت)
  3. جماعت اسلامی ..... (سربراہ: میاں طفیل محمد ، مذہبی وہابی جماعت)
  4. تحریک استقلال ..... (سربراہ: ریٹائرڈ ائر مارشل اصغر خان ، سیکولر اور ریٹائرڈ فوجیوں کی جماعت)
  5. نیشنل ڈیموکریٹک پارٹی ..... (سربراہ: شیر باز مزاری ، بیگم نسیم ولی خان ، سیکولر قوم پرست علاقائی پشتو جماعت)
  6. پاکستان مسلم لیگ ..... (سربراہ: پیر صاحب پگارا ، قدامت/پیر پرست علاقائی سندھی جماعت)
  7. پاکستان جمہوری پارٹی ..... (سربراہ: نوابزادہ نصراللہ خان ، جاگیردار پنجابی جماعت ، ٹانگہ پارٹی)
  8. خاکسار تحریک ..... (سربراہ: ؟ ، تشدد پسند انقلابی اور نظریاتی جماعت)
  9. کل جموں و کشمیر مسلم کانفرنس ..... (سربراہ: سردار عبدالقیوم خان ، علاقائی کشمیری جماعت)

یاد رہے کہ اس وقت کی سیاسی صورتحال میں دیگر اہم سیاسی جماعتوں میں سے صرف مسلم لیگ کے تین دیگر دھڑے یعنی قیوم لیگ ، کونسل اور کنوینشن مسلم لیگ ہی اس اتحاد سے باہر تھے۔ بھٹو حکومت کے خاتمے کے بعد جب مارشل لاء لگانے کا مقصد پورا ہوا تو بھانت بھانت کی بولیاں بولنے والا یہ سیاسی اتحاد بھی اپنی موت آپ مر گیا تھا۔

یہ حیرت کی بات نہیں تھی کہ اس مصنوعی سیاسی اتحاد کے خاتمے کا آغاز ہی ائرمارشل (ریٹائرڈ) اصغر خان نے کیا تھا۔۔!






PNA (Pakistan National Alliance)

Sunday, 10 January 1977

Pakistan National Alliance was a 9-parties political alliance in 1977-election in Pakistan..




پاکستان کی تاریخ پر ایک منفرد ویب سائٹ

پاک میگزین ، پاکستان کی سیاسی تاریخ پر ایک منفرد ویب سائٹ ہے جس پر سال بسال اہم ترین تاریخی واقعات کے علاوہ اہم شخصیات پر تاریخی اور مستند معلومات پر مبنی مخصوص صفحات بھی ترتیب دیے گئے ہیں جہاں تحریروتصویر ، گرافک ، نقشہ جات ، ویڈیو ، اعدادوشمار اور دیگر متعلقہ مواد کی صورت میں حقائق کو محفوظ کرنے کی کوشش کی جارہی ہے۔

2017ء میں شروع ہونے والا یہ عظیم الشان سلسلہ، اپنی تکمیل تک جاری و ساری رہے گا، ان شاءاللہ



پاکستان کے اہم تاریخی موضوعات



تاریخِ پاکستان کی اہم ترین شخصیات



تاریخِ پاکستان کے اہم ترین سنگِ میل



پاکستان کی اہم معلومات

Pakistan

چند مفید بیرونی لنکس



پاکستان فلم میگزین

پاک میگزین" کے سب ڈومین کے طور پر "پاکستان فلم میگزین"، پاکستانی فلمی تاریخ، فلموں، فنکاروں اور فلمی گیتوں پر انٹرنیٹ کی تاریخ کی پہلی اور سب سے بڑی ویب سائٹ ہے جو 3 مئی 2000ء سے مسلسل اپ ڈیٹ ہورہی ہے۔


پاکستانی فلموں کے 75 سال …… فلمی ٹائم لائن …… اداکاروں کی ٹائم لائن …… گیتوں کی ٹائم لائن …… پاکستان کی پہلی فلم تیری یاد …… پاکستان کی پہلی پنجابی فلم پھیرے …… پاکستان کی فلمی زبانیں …… تاریخی فلمیں …… لوک فلمیں …… عید کی فلمیں …… جوبلی فلمیں …… پاکستان کے فلم سٹوڈیوز …… سینما گھر …… فلمی ایوارڈز …… بھٹو اور پاکستانی فلمیں …… لاہور کی فلمی تاریخ …… پنجابی فلموں کی تاریخ …… برصغیر کی پہلی پنجابی فلم …… فنکاروں کی تقسیم ……

پاک میگزین کی پرانی ویب سائٹس

"پاک میگزین" پر گزشتہ پچیس برسوں میں مختلف موضوعات پر مستقل اہمیت کی حامل متعدد معلوماتی ویب سائٹس بنائی گئیں جو موبائل سکرین پر پڑھنا مشکل ہے لیکن انھیں موبائل ورژن پر منتقل کرنا بھی آسان نہیں، اس لیے انھیں ڈیسک ٹاپ ورژن کی صورت ہی میں محفوظ کیا گیا ہے۔

پاک میگزین کا تعارف

"پاک میگزین" کا آغاز 1999ء میں ہوا جس کا بنیادی مقصد پاکستان کے بارے میں اہم معلومات اور تاریخی حقائق کو آن لائن محفوظ کرنا ہے۔

Old site mazhar.dk

یہ تاریخ ساز ویب سائٹ، ایک انفرادی کاوش ہے جو 2002ء سے mazhar.dk کی صورت میں مختلف موضوعات پر معلومات کا ایک گلدستہ ثابت ہوئی تھی۔

اس دوران، 2011ء میں میڈیا کے لیے akhbarat.com اور 2016ء میں فلم کے لیے pakfilms.net کی الگ الگ ویب سائٹس بھی بنائی گئیں لیکن 23 مارچ 2017ء کو انھیں موجودہ اور مستقل ڈومین pakmag.net میں ضم کیا گیا جس نے "پاک میگزین" کی شکل اختیار کر لی تھی۔

سالِ رواں یعنی 2024ء کا سال، "پاک میگزین" کی مسلسل آن لائن اشاعت کا 25واں سلور جوبلی سال ہے۔




PAK Magazine is an individual effort to compile and preserve the Pakistan history online.
All external links on this site are only for the informational and educational purposes and therefor, I am not responsible for the content of any external site.