PAK Magazine
Friday, 18 June 2021, Week: 24

Pakistan History

سالانہ | ماہانہ | ہفتہ وارانہ | روزانہ | حروفانہ | اہم ترین | تحریک پاکستان | ذاتی ڈائریاں

Pakistan History

2020

دیامیر بھاشا ڈیم

بدھ 15 جولائی 2020
Diamer-Bhasha Dam inaugurated - again..!
وزیر اعظم پاکستان عمران خان نے 15 جولائی 2020ء کو ایک بار پھر دیامیر بھاشا ڈیم کا سرکاری طور پر افتتاح کر دیا ہے۔ اس منصوبے کا سب سے پہلا افتتاح 1998ء میں اس وقت کے وزیر اعظم میاں نواز شریف نے کیا تھا۔ 2006ء میں جنرل پرویز مشرف نے ڈیم کی دوبارہ تعمیر کا اعلان کرتے ہوئے اپنے وزیر اعظم شوکت عزیز سے ایک بار پھر افتتاح کروایا تھا۔ ایک اور افتتاح 2011ء میں سابق وزیر اعظم یوسف رضا گیلانی نے بھی کیا تھا۔

دیامیر بھاشا ڈیم کےمنصوبے کی تجویز 1980 کی دہائی کے آغاز میں زیر غور آئی تھی۔ ڈیم کی فزیبلٹی رپورٹ پہلی مرتبہ 2004ء میں تیار کی گئی تھی۔ 2008ء میں وفاق اور چاروں صوبوں کے نمائندوں پر مشتمل ایگزیکٹو کمیٹی آف نیشنل اکنامکس کونسل نے ڈیم کی تعمیر کی باقاعدہ اجازت دے دی تھی۔ یہ ڈیم دریائے سندھ پر گلگت بلتستان کے ضلع دیامیر اور خیبر پختونخواہ کے سرحدی علاقے کوہستان میں بھاشا کے مقام پر تعمیر کیا جارہا ہے اور اسی وجہ سے اسے دیامیر بھاشا ڈیم کا نام دیا گیا ہے۔ یہ ڈیم ، تربیلا ڈیم سے 315 کلومیٹر کی بلندی پر جبکہ گلگت بلتستان کے دارالحکومت گلگت سے 165 کلومیٹر اور چلاس سے 40 کلومیٹر دور دریائے سندھ کے نچلی طرف ہو گا۔ واپڈا کے مطابق ڈیم کی بلندی 272 میٹر ہو گی اور اس کے 14 سپل وے گیٹ تعمیر کیے جائیں گے۔ اس میں مجموعی طور پر پانی ذخیرہ کرنے کی گنجائش 81 لاکھ ایکٹر فٹ ہو گی جبکہ اس میں ہر وقت 64 لاکھ ایکٹر فٹ پانی موجود رہے گا۔ اس ڈیم سے بجلی پیدا کرنے کی صلاحیت 4500 میگا واٹ ہو گی اور اس کے لیے 12 ٹربائن لگائی جائیں گی اور ہر ایک ٹربائن سے متوقع طور پر 375 میگا واٹ بجلی پیدا ہو گی۔ ڈیم کی تعمیر سے 30 دیہات اور مجموعی طور پر 2200 گھرانے اور 22 ہزار افراد متاثر ہوں گے جبکہ 500 ایکڑ زرعی اراضی اور شاہراہ قراقرم کا سو کلومیٹر کا علاقہ بھی زیر آب آ جائے گا۔ دیامیر بھاشا ڈیم کی تعمیر 2028/29ء تک مکمل ہوگی۔

دیامیر بھاشا ڈیم کی تعمیر کا تخمینہ 14 کھرب روپے سے زائد ہے جو پاکستان اپنے وسائل سے پورا نہیں کر سکتا۔ سابق چیف جسٹس ثاقب نثار کے ڈیم فنڈ میں صرف 12 ارب روپے جمع ہوئے تھے جو اونٹ کے منہ میں زیرہ ہے۔ باقی اخراجات کے لئے عالمی فنڈنگ درکار ہے جو متنازعہ علاقے میں تعمیر کی وجہ سے ممکن دکھائی نہیں دیتی۔ 2012/13ء میں اس وقت کی حکومت کی کوششوں کے باوجود عالمی اداروں نے سرمایہ کی فراہمی کو بھارت کی طرف سے این او سی جاری کرنے سے مشروط کر دیا تھا۔ ذرائع کے مطابق دیامیر بھاشا ڈیم پر بڑی رقم چین فراہم کرے گا لیکن معاہدے یا شرائط کے بارے میں کوئی اطلاع نہیں ہے۔ واپڈا کے مطابق پاکستان کے اس سب سے بڑے دیامیر بھاشا ڈیم کی تعمیرکے لیے ٹھیکہ پاکستان کی فوج کے زیر انتظام چلنے والے ادارے فرنٹیئر ورکس آرگنائزیشن (ایف ڈبلیو او) اور چین کی حکومتی کمپنی پاور چائنا کے اشتراک کار کو دیا گیا ہے۔ جبکہ 27 ارب 18 کروڑ 20 لاکھ روپے مالیت کا کنسلٹنسی سروسز ٹھیکہ دیامیر بھاشا کنسلٹنٹس گروپ نامی اشتراک کار کو دیا گیا ہے۔ اس کنسلٹنٹ گروپ میں 12 کمپنیاں شامل ہے جن کی مرکزی کمپنی نیسپاک ہے۔

15 جولائی 2020ء کو افتتاح کے موقع پر بتایا گیا ہے کہ ضلع دیامرمیں دسمبر 2020ء تک پاک فوج کے 120 دستے تعینات کرنے کی منظوری دے دی گئی ہے۔ وزیراعظم عمران خان کی ہدایت پر وفاقی کابینہ سے سرکولیشن کے ذریعے منظوری حاصل کی گئی۔ محکمہ داخلہ گلگت بلتستان نے آئین کے آرٹیکل 245 کے تحت فوج طلب کرنے کی درخواست کی تھی۔ ذرائع کے مطابق ڈیم کی تعمیر کے لیے زمین کے حصول کے دوران تھریٹ الرٹ موصول ہوئے تھے۔




Diamer Bhasha Dam

Wednesday, 15 July 2020

Once again - Diamer-Bhasha Dam was inaugurated - this time by Prime Minister Imran Khan on July 15, 2020..!





World history
Pakistan Media

Pakistan History

تاریخ پاکستان
پاکستان میں موٹروے
پاکستان میں موٹروے
آدم جی جوٹ ملز
آدم جی جوٹ ملز
مشرقی پاکستان میں لسانی فسادات
مشرقی پاکستان میں لسانی فسادات
1962ء کا آئین
1962ء کا آئین
نقشہ اپنا اپنا
نقشہ اپنا اپنا

Other segments on Pak Magazine

مستقل سلسلے
اخبارات
اخبارات
جغرافیائی تاریخ
جغرافیائی تاریخ
سقوط ڈھاکہ
سقوط ڈھاکہ
قائد اعظمؒ
قائد اعظمؒ
بھٹو شہیدؒ
بھٹو شہیدؒ
آمر مردود
آمر مردود
صدر
صدر
وزیر اعظم
وزیر اعظم
آرمی چیف
آرمی چیف
چیف جسٹس
چیف جسٹس
مغلیہ سلطنت
مغلیہ سلطنت
ڈنمارک
ڈنمارک
اٹلی کا سفر
اٹلی کا سفر
حج بیت اللہ
حج بیت اللہ
سیف الملوک
سیف الملوک
شعر و شاعری
شعر و شاعری
ہیلتھ میگزین
ہیلتھ میگزین
فلم میگزین
فلم میگزین

Some useful external links


Some useful history sites

World links

Some useful links

Cricket links

IT links

Urdu poetry links

Pakistan
Pakistan

وکی پیڈیا پر پاکستان کی تاریخ


Pakistan World Rankings

پاکستان کی عالمی درجہ بندی

پاکستان کی معیشت ، سیاست و ریاست اور دیگر اہم موضوعات میں عالمی درجہ بندیوں کی معلومات کو اپ ڈیٹ کیا جا رہا ہے۔ روایتی حریف بھارت اور جڑواں بھائی بنگلہ دیش کی درجہ بندیوں کے علاوہ دنیا کی ایک مثالی جمہوریت ڈنمارک کو بھی موازنے کے طور پر شامل کیا گیا ہے۔ درجہ بندیوں میں چھوٹے اعداد بہترین اور بڑے بدترین ہیں جبکہ تمام رقوم امریکی ڈالروں میں ہیں۔
آبادی (لاکھوں میں)225213726170058
آبادی کی درجہ بندی528113
رقبہ33792130
فی کس آمدن12851877188858439
فی کس آمدن کی درجہ بندی1541391427
ڈالر ریٹ16071846
معیشت کا حجم2233051
زرمبادلہ کے ذخائر (اربوں میں)135844378
زرمبادلہ کے ذخائر کی درجہ بندی7154631
خوشحالی123591073
انسانی ترقی15413313110
تعلیم1281121552
صحت عامہ123591073
فوجی طاقت1044554
دہشت گردی سے متاثر783385
امن و امان کی صورتحال1531411015
مذہبی وابستگی50543145
ایمانداری124861461
جمہوری روایات10553767
پاسپورٹ کی عزت107851015


Pakistan Exchange Rates

Pakistan Rupee Exchange Rate