PAK Magazine | An Urdu website on the Pakistan history
Monday, 20 May 2024, Day: 141, Week: 21

PAK Magazine |  پاک میگزین پر تاریخِ پاکستان ، ایک منفرد انداز میں


پاک میگزین پر تاریخِ پاکستان

Annual
Monthly
Weekly
Daily
Alphabetically

سوموار 22 نومبر 1954

محمد علی بوگرا فارمولا

Mohammad Ali Bogra

پاکستان کے پہلے کٹھ پتلی وزیر اعظم
محمد علی بوگرا

پہلے کٹھ پتلی وزیراعظم

پاکستان کے پہلے کٹھ پتلی وزیر اعظم محمد علی بوگرا ، امریکہ میں سفیر تھے اور "چھٹیوں پر" وطن واپس آئے ہوئے تھے کہ انہیں 17 اپریل 1953ء کو بظاہر غیر متوقع طور پر لیکن ایک طے شدہ منصوبہ کے تحت اس وقت کی "خلائی مخلوق" نے وزیر اعظم بنا دیا تھا۔۔!

امریکی گندم کی آمد

اس سے قبل دوسرے وزیر اعظم خواجہ ناظم الدین کی حکومت کو برخاست کرنے کا پورا پورا بندوبست کیا گیا تھا جن میں لسانی اور مذہبی فسادات کے علاوہ غذائی بحران بھی پیدا کیا گیا تھا۔ بھوکی قوم کا پیٹ بھرنے کے لئے مستقبل کے ان داتا امریکہ بہادر سے گندم بھی منگوائی گئی تھی جسے اونٹ گاڑیوں پر لاد کر کراچی کی سڑکوں پر گھمایا گیا تھا اور اونٹوں کے گلے میں تختیاں لٹکائی گئی تھیں جن پر "تھینک یو امریکہ" لکھا ہوا تھا۔

حاضرسروس جرنیل ، وزیردفاع

اسی سال یعنی ستمبر 1953ء میں آرمی چیف جنرل ایوب خان نے امریکہ کا سرکاری دورہ کیا تھا جس میں روس کے خلاف فوجی معاہدوں کے علاوہ فوجی اور اقتصادی امداد کا ایک بڑا پیکج بھی ساتھ لائے تھے۔ یہ سب انتظام کرنے کے بعد کٹھ پتلی حکومت نے ایک حاضر سروس جنرل کو وزیر دفاع بھی بنا دیا گیا تھا جس سے پاکستان کےمستقبل کا سیاسی خاکہ بھی تیار ہو گیا تھا۔ غریب کی جورو کی طرح مسلم لیگ ہر طالع آزما کی بھابھی بن گئی تھی اور 17 اکتوبر 1953ء کو بوگرا صاحب کو مسلم لیگ کا صدر بھی بنا دیا گیا تھا۔ بنگالیوں کو 7 مئی 1954ء کو بنگالی کو دوسری قومی زبان بنانے کا لالی پاپ بھی دیا گیا تھا لیکن 8 مارچ 1954ء کے صوبائی انتخابات میں مشرقی پاکستان سے مسلم لیگ کا مکمل صفایا ہو گیا تھا۔

ون یونٹ کس کے ذہن کی اختراع تھی؟

12 اگست 1955ء کو کام مکمل ہونے اور پر پھڑپھڑانے کی ناکام کوشش میں بوگرا صاحب کی چھٹی کروا کر واپس امریکہ میں سفیر کے عہدہ پر پہنچا دیا گیا تھا۔ پرانی خدمات کے عوض 1962/63ء میں انہیں ایوب حکومت نے وزیر خارجہ بھی بنایا تھا اور اسی حیثیت میں 23 جنوری 1963ء کو ان کا انتقال ہو گیا تھا۔ 22 نومبر 1954ء کو ریڈیو پاکستان کی اس نشری تقریر میں وہ جنرل ایوب خان کے ذہن کی اختراع "ون یونٹ" یا جسے تاریخ میں "بوگرا فارمولا" بھی کہا جاتا ہے ، کے قیام کی بھر پور انداز میں وکالت کر رہے ہیں۔

دو متضاد بوگرا فارمولے

دلچسپ بات یہ ہے کہ 22 نومبر 1954ء کا یہ "بوگرا فارمولا" اس "بوگرا فارمولا" کا مکمل یوٹرن تھا جو 5 اکتوبر 1953ء کو انہی کی قیادت میں حکمران جماعت مسلم لیگ نے منظور کیا تھا جو کچھ اس طرح سے تھا:

  • وفاقی پارلیمان کے دو ایوان ہوں گے جنہیں مساوی اختیارات حاصل ہوں گے۔
  • ایوان بالا (یا آج کا سینٹ) کے ارکان کی تعداد 50 ہوگی جن میں پانچوں یونٹوں یعنی (1) مشرقی بنگال ، (2) مغربی پنجاب ، (3) سندھ اور ریاست خیرپور ، (4) صوبہ سرحد مع سرحدی ریاستیں اور قبائلی علاقے اور (5) کراچی ، بلوچستان اور ریاست بہاولپور سے دس دس ارکان منتخب ہوں گے۔
  • ایوان زیریں (یا آج کی قومی اسمبلی) 300 ارکان پر مشتمل ہوگی جن میں سے پہلے یونٹ یعنی مشرقی بنگال سے 165 ، دوسرے یونٹ یعنی مغربی پنجاب سے 75 ، تیسرے یونٹ یعنی سندھ اور ریاست خیرپور سے 19 ، چوتھے یونٹ یعنی سرحد ، سرحدی ریاستوں اور قبائلی علاقوں سے 24 اور پانچویں یونٹ یعنی وفاق کے زیرانتظام کراچی ، بلوچستان اور ریاست بہاولپور سے 17 ارکان براہ راست انتخابات سے منتخب ہوں گے۔






Muhammad Ali Bogra

Monday, 22 November 1954

Prime Minister Mohammad Ali Bogra announced his Bogra-Formula on 22 November 1954, which is known as "One Unit Scheme". All parts of now days Pakistan were merged to a single province as West Pakistan and East Bengal was renamed as East Pakistan on 5 October 1955.


Muhammad Ali Bogra (video)

Credit: Pak Broad Cor



پاکستان کی تاریخ پر ایک منفرد ویب سائٹ

پاک میگزین ، پاکستان کی سیاسی تاریخ پر ایک منفرد ویب سائٹ ہے جس پر سال بسال اہم ترین تاریخی واقعات کے علاوہ اہم شخصیات پر تاریخی اور مستند معلومات پر مبنی مخصوص صفحات بھی ترتیب دیے گئے ہیں جہاں تحریروتصویر ، گرافک ، نقشہ جات ، ویڈیو ، اعدادوشمار اور دیگر متعلقہ مواد کی صورت میں حقائق کو محفوظ کرنے کی کوشش کی جارہی ہے۔

2017ء میں شروع ہونے والا یہ عظیم الشان سلسلہ، اپنی تکمیل تک جاری و ساری رہے گا، ان شاءاللہ



پاکستان کے اہم تاریخی موضوعات



تاریخِ پاکستان کی اہم ترین شخصیات



تاریخِ پاکستان کے اہم ترین سنگِ میل



پاکستان کی اہم معلومات

Pakistan

چند مفید بیرونی لنکس



پاکستان فلم میگزین

پاک میگزین" کے سب ڈومین کے طور پر "پاکستان فلم میگزین"، پاکستانی فلمی تاریخ، فلموں، فنکاروں اور فلمی گیتوں پر انٹرنیٹ کی تاریخ کی پہلی اور سب سے بڑی ویب سائٹ ہے جو 3 مئی 2000ء سے مسلسل اپ ڈیٹ ہورہی ہے۔


پاکستانی فلموں کے 75 سال …… فلمی ٹائم لائن …… اداکاروں کی ٹائم لائن …… گیتوں کی ٹائم لائن …… پاکستان کی پہلی فلم تیری یاد …… پاکستان کی پہلی پنجابی فلم پھیرے …… پاکستان کی فلمی زبانیں …… تاریخی فلمیں …… لوک فلمیں …… عید کی فلمیں …… جوبلی فلمیں …… پاکستان کے فلم سٹوڈیوز …… سینما گھر …… فلمی ایوارڈز …… بھٹو اور پاکستانی فلمیں …… لاہور کی فلمی تاریخ …… پنجابی فلموں کی تاریخ …… برصغیر کی پہلی پنجابی فلم …… فنکاروں کی تقسیم ……

پاک میگزین کی پرانی ویب سائٹس

"پاک میگزین" پر گزشتہ پچیس برسوں میں مختلف موضوعات پر مستقل اہمیت کی حامل متعدد معلوماتی ویب سائٹس بنائی گئیں جو موبائل سکرین پر پڑھنا مشکل ہے لیکن انھیں موبائل ورژن پر منتقل کرنا بھی آسان نہیں، اس لیے انھیں ڈیسک ٹاپ ورژن کی صورت ہی میں محفوظ کیا گیا ہے۔

پاک میگزین کا تعارف

"پاک میگزین" کا آغاز 1999ء میں ہوا جس کا بنیادی مقصد پاکستان کے بارے میں اہم معلومات اور تاریخی حقائق کو آن لائن محفوظ کرنا ہے۔

Old site mazhar.dk

یہ تاریخ ساز ویب سائٹ، ایک انفرادی کاوش ہے جو 2002ء سے mazhar.dk کی صورت میں مختلف موضوعات پر معلومات کا ایک گلدستہ ثابت ہوئی تھی۔

اس دوران، 2011ء میں میڈیا کے لیے akhbarat.com اور 2016ء میں فلم کے لیے pakfilms.net کی الگ الگ ویب سائٹس بھی بنائی گئیں لیکن 23 مارچ 2017ء کو انھیں موجودہ اور مستقل ڈومین pakmag.net میں ضم کیا گیا جس نے "پاک میگزین" کی شکل اختیار کر لی تھی۔

سالِ رواں یعنی 2024ء کا سال، "پاک میگزین" کی مسلسل آن لائن اشاعت کا 25واں سلور جوبلی سال ہے۔




PAK Magazine is an individual effort to compile and preserve the Pakistan history online.
All external links on this site are only for the informational and educational purposes and therefor, I am not responsible for the content of any external site.